دنیا

کویت: تارکین وطن کی بڑی تعداد خلیج چھوڑ کر جانے کو تیار نہیں

کویت اردو نیوز 11 دسمبر: “بلومبرگ” ایجنسی نے “آکسفورڈ اکنامکس” کی ایک رپورٹ کے حوالے سے نقل کیا ہے جیسا کہ توقع کی جا رہی تھی کہ تارکین وطن کی ایک بڑی تعداد خلیجی خطے کو خیرباد کہہ دے گی لیکن اس کے برعکس شاید بڑی تعداد میں چھوڑ کر جانے والے تارکین وطن کی تعداد اتنی زیادہ نہیں ہو گی جیسا کہ اندازہ لگایا جا رہا تھا۔ اس کی سب سے مضبوط وجہ بحران کے دوران اور اس سے آگے کے کچھ خصوصاً سعودی عرب اور قطر جیسے ممالک کی مضبوط معاشی کارکردگی ہے۔

تحریر جاری ہے‎

آکسفورڈ اکنامکس کے چیف ماہر معاشیات اسکاٹ لیورمور نے کہا کہ وبائی بیماری کے دوران تارکین وطن کی غیر تیل جی ڈی پی ملازمتوں میں کمی کا اثر پچھلی توقعات سے کم تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ سفر اور بلا معاوضہ چھٹی پر عائد پابندیوں سے خلیج میں تارکین وطن مزدوروں کے کھونے اور اپنے آبائی ممالک واپس جانے کا خطرہ کم ہوگیا ہے۔ غیر ملکی کارکنوں کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جبکہ خلیجی ممالک مختلف معاشی شعبوں جیسے تعمیرات اور بینکاری میں غیر ملکی کارکنوں پر بہت زیادہ انحصار کرتے ہیں لیکن عالمی صحت کی ہنگامی صورتحال کے دوران خلیجی معیشتوں کی سست روی اور ان کے تنازعہ کے ساتھ خطے میں ہزاروں تارکین وطن اپنی ملازمتیں کھونے کے بعد اپنے ممالک لوٹنے پر مجبور ہوگئے۔

انہوں نے اس بات کی نشاندہی کی کہ کویت ان ممالک میں سے ایک ہے جس نے تارکین وطن کے لئے اپنے ممالک واپسی کی راہ ہموار کر کے ملازمتوں میں ہونے والے نقصان پر مقامی غصے کو ختم کیا اور غیر ملکی کارکنوں کی تعداد میں کمی لانے کے لئے قانون سازی کی جبکہ سعودی عرب اور قطر کا مقصد نجی شعبے میں شہریوں کے لیے روزگار کو بڑھانا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ ابھی بھی بڑی تعداد میں تارکین وطن کے خلیجی ممالک سے رخصت ہونے کی توقع ہے اور یہ بھی توقعات ہیں کہ غیر ملکی کارکن کورونا کے خاتمے کے بعد بحرین ، قطر اور سعودی عرب واپس آجائیں گے حالانکہ پہلے جیسی زندگی میں لوٹنے کے اس معاملے کو دو سال لگ سکتے ہیں۔ یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ کویت اور عمان نے غیر ملکی کارکنوں کو فیصلہ کن نظرانداز کر دیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ سعودی عرب میں غیر ملکی ملازمتوں میں کمی مارچ اور نومبر کے درمیان 3.8 فیصد (گھریلو ملازمین کو چھوڑ کر) کی توقع سے کم تھی جبکہ اسی عرصے میں قطر میں تارکین وطن کی تعداد میں 2.8 فیصد کمی واقع ہوئی جس نے اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں جہاں کمی کا اعلان کیا گیا تھا اہم شعبوں میں افرادی قوت کی ایک بڑی تعداد موجود ہے اور ان میں غیر ملکیوں کی تعداد پچھلی توقعات کے مطابق کم ہونے کا امکان ہے۔

حوالہ
القبس
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ