دنیا

خلیجی ممالک میں متحدہ عرب امارات سب سے مالدار ملک قرار

کویت اردو نیوز 02 نومبر: مشرق وسطیٰ میں متحدہ عرب امارات سب سے مالدار ملک قرار دے دیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات برصغیر پاک ، یورپ اور مشرق وسطی کے سرمایہ کاروں کے لئے سنہری منزل کے طور پر پہلے پانچ ممالک میں شامل ہو گیا ہے۔

نیو ورلڈ ویلتھ کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق متحدہ عرب امارات مشرق وسطی کا ایک امیر ترین ملک بن گیا ہے جبکہ دبئی سب سے امیر شہر قرار دیا گیا ہے۔

ویلتھ سیکٹر کو مرتب کرنے والی نئی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ جون 2020 تک ملک میں 82،763 اعلی اور انتہائی اعلی مالیت والے افراد (یو این ایچ ڈبلیو آئی) ڈی ایچ 3 کھرب مالیت کے مالک ہیں۔ متحدہ عرب امارات میں 12 ارب پتی افراد ہیں۔ 214 کروڑ پتی 100 ملین ڈالر سے زیادہ کی مالیت کے اثاثے رکھتے ہیں 3،410 کروڑ پتی 10 ملین ڈالر سے زیادہ کے اثاثے رکھتے ہیں 79،100 کروڑ پتی 1 ملین ڈالر کے اثاثوں کے مالک ہیں جبکہ ان کی مشترکہ دولت 825 بلین ڈالر ( dirham3trillion) ہے۔

اسرائیل اس خطے میں 744 بلین ڈالر کے ساتھ دوسرے نمبر پر آیا۔ اس کے بعد سعودی عرب (482 بلین ڈالر)، ترکی (422 بلین ڈالر) اور ایران (266 بلین) کے ساتھ ہیں۔

نائٹ فرینک کی تازہ ترین ویلتھ رپورٹ 2020 میں اندازہ لگایا گیا ہے کہ متحدہ عرب امارات میں 1،681 یو یو ڈبلیو ڈبلیوز ہیں جن کی دولت 30 ملین ڈالر سے زیادہ ہے اور یو این ڈبلیو آئی کی سب سے زیادہ تعداد رکھنے کے لئے اسے دنیا بھر کے 30 ممالک میں شامل کیا جاتا ہے۔ اس میں یہ بھی پیش گوئی کی گئی ہے کہ متحدہ عرب امارات اگلے پانچ سالوں میں یو این ڈبلیو آئ میں 24 فیصد اضافے کا مظاہرہ کرے گا جو روس، ترکی، امریکہ، فرانس، اٹلی، سوئٹزرلینڈ، جرمنی، جاپان اور تھائی لینڈ سے زیادہ ہے۔

نائٹ فرینک کے ذریعہ کئے گئے ایک سروے میں متحدہ عرب امارات برصغیر پاک ، یورپ اور مشرق وسطی کے سرمایہ کاروں کے لئے سرمایہ کاری کی منزل کے طور پر پہلے پانچ ممالک میں شامل ہوا۔

“پچھلے 20 سالوں میں متحدہ عرب امارات (HNWIs) کی منتقلی کے لئے دنیا کا سب سے بڑا وصول کنندہ رہا ہے۔ اندازہ ہے کہ 2010 سے 2020 کے دوران گذشتہ ایک دہائی کے دوران 25،000 سے زیادہ (HNWIs) متحدہ عرب امارات میں منتقل ہوچکے ہیں۔ ان افراد میں سے بیشتر ہندوستان ، مشرق وسطی اور افریقہ سے آئے ہیں۔

مزید پڑھیں: عوام اور رہائشی اپنے تیار شدہ بطاقے مشینوں سے جلدی وصول کریں

ان شہروں میں دبئی اس خطے کا تجارتی اور سیاحتی مرکز میں نو ارب پتی 2،310 یو این ڈبلیو موجود ہیں جو 10 ملین ڈالر سے زیادہ کے اثاثوں کے مالک ہیں اور 49،400 یو ایچ ڈبلیو آئی ایک ملین ڈالر سے زیادہ کی دولت رکھتے ہیں۔ نیو ورلڈ ویلتھ نے بتایا کہ مجموعی طور پر ان کے پاس 491 بلین ڈالر (1.8 ٹریلین درہم) مالیت کے اثاثے ہیں۔

اس خطے کے دوسرے امیر ترین شہر تل ابیب ہیں جہاں ملینیئرز اور بلنئیرز کے پاس 289 بلین ڈالر کے اثاثے ہیں اس کے بعد استنبول (154 بلین ڈالر) ، ابوظہبی (137 بلین ڈالر) ، ریاض (121 ارب ڈالر) ، دوحہ (112 بلین ڈالر) ، یروشلم (110 بلین ڈالر) ، تہران (60 بلین ڈالر) ، ہرزلیہ (30 ارب ڈالر) ، نیتنیا (29 ارب ڈالر) ، انقرہ (24 ارب ڈالر) ، الیاٹ (23 ارب ڈالر) اور شارجہ (20 ارب ڈالر) ہیں۔

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ