دنیا

دبئی ائیر پورٹ پر پھنسے ہوئے 200 سے زائد پاکستانی اور بھارتی شہری

پاکستان اور بھارت سے آنے والے 200 سے زائد سیاحتی ویزا رکھنے والے وطن واپس پہنچ گئے۔

بھارت اور پاکستان کے 200 سے زائد پھنسے ہوئے سیاحتی ویزا ہولڈر جو متحدہ عرب امارات امیگریشن حکام کے ذریعہ طے شدہ کم سے کم داخلے کے معیار پر پورا نہیں اتر سکے تھے انہیں جمعرات کے روز وطن واپس جانا پڑا۔

پاکستان کے کل 545 سیاحتی ویزا ہولڈر اور 100 سے زائد ہندوستانی شہری بدھ سے دبئی انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر پھنسے ہوئے تھے۔ دبئی میں پاکستانی اور ہندوستانی سفارتی مشن کے ذرائع اور ٹریول کمپنیوں
نے دبئی میں پھنسے ہوئے مسافروں کی خبروں کی تصدیق کی ہے۔ جمعرات کی دوپہر 1 بجے تک ہندوستان اور پاکستان سے 200 سے زیادہ مسافر پہلے ہی اپنے اپنے ممالک واپس لوٹ چکے تھے۔

ہوائی اڈے کے ذرائع نے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے کہ جنوبی ایشین اور افریقی ممالک کے کچھ دیگر ممالک کے مسافر بھی اسی طرح کی ایک مشکل صورتحال میں پھنسے ہوئے ہیں۔

دبئی میں جنرل ڈائریکٹوریٹ آف ریزیڈنسی اور غیر ملکی امور (جی ڈی آر ایف اے) نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ سیاحتی ویزا رکھنے والوں کے داخلے کی شرائط پر عمل نہ کرنے پر مسافروں کو دبئی میں داخلے سے روک دیا گیا تھا۔ متحدہ عرب امارات کے امیگریشن کے اصول کے مطابق مسافروں کو لازمی طور پر ہوٹلوں کی ریزرویشن یا کسی رشتے دار کا حوالہ اور واپسی کی ٹکٹ کی بکنگ رکھنی ہوگی۔

اتھارٹی نے یہ بھی کہا کہ ویزا کے قواعد کی پاسداری کرنے والے بہت سارے مسافروں کو دبئی آنے پر تاخیر کا سامنا نہیں کرنا پڑتا ہے۔

پاکستانی مسافر:

جمعرات کے روز قونصلیٹ جنرل آف پاکستان نے بتایا کہ وزٹ ویزوں پر آنے والے مجموعی طور پر 545 پاکستانی شہری ، جو پی آئی اے ، ایئر بلیو ، فلائی دبئی اور امارات سے دبئی پہنچے تھے متحدہ عرب امارات کے امیگریشن حکام کی جانب سے طے شدہ داخلی شرائط کی تعمیل نہ کرنے پر متحدہ عرب امارات میں داخلے سے انکار کردیا گیا تھا۔

مزید پڑھیں: پاکستان سے دبئی ویزٹ ویزا پر جانے والوں کے لیے اہم ہدایات جاری

کل سے اب تک تقریبا 169 افراد وطن واپس جا چکے ہیں۔ دبئی میں پاکستان کے قونصل جنرل احمد امجد علی نے کہا کہ “ہم ہوائی اڈے پر پھنسے ہوئے لوگوں کو واپس بھیج رہے ہیں اور جیسے ہی ہوائی جہاز میں نشستیں دستیاب ہوں یہ عمل جاری رہے گا۔

مشن کی جانب سے ایک بیان میں لکھا گیا ہے کہ “قونصل خانے کے جنرل کی کوششوں سے متحدہ عرب امارات کے حکام نے کچھ ایسے پاکستانی شہریوں کو داخلہ دیا جو کم سے کم تقاضوں کو پورا کرتے تھے۔ قونصل خانہ نے اس بات کو یقینی بنایا کہ تمام پاکستانی مسافروں کو کھانا فراہم کیا جائے۔ خود قونصل جنرل کی سربراہی میں ایک ٹیم مسافروں کی سہولت کے لئے ہوائی اڈے پر موجود ہے۔

بھارتی مسافر:

ٹریول ایجنٹوں نے بتایا کہ متعدد ہندوستانی مسافر بدھ کے روز کننور اور ممبئی سے گو ایئر کی پروازوں پر پہنچے۔
دبئی میں ہندوستان کے قونصل جنرل کے قونصل پریس ، اطلاعات ، اور ثقافت نیرج اگروال نے بتایا کہ بدھ کی رات سے کم از کم 57 ہندوستانی مسافر ہوائی اڈے پر پھنسے ہوئے ہیں۔ “ہماری ہیلپ لائن کے ذریعہ قونصل خانے کو آگاہ کیا گیا تھا۔ ہمارے ذرائع کا کہنا ہے کہ کم از کم 14 افراد کو دبئی میں داخلے کی اجازت دی گئی تھی تاہم باقی کل رات سے ہی ائیر پورٹ پر ہیں۔ غیر مصدقہ ذرائع نے بتایا ہے کہ کم از کم 50 کو داخلے سے انکار کردیا گیا ہے اور وہ ہندوستان واپس چلے گئے ہیں۔

عہدیدار نے بتایا کہ قونصل خانے کا عملہ پھنسے ہوئے مسافروں کی مدد کے لئے آگے آیا ہے اور ضرورت پڑنے پر انہیں کھانا، پانی اور دیگر سہولیات مہیا کر رہا ہے۔

بھارتی سفارت کار نے مزید کہا کہ “ہم مقامی امیگریشن قوانین کا پوری طرح احترام کرتے ہیں اور یہ قواعد ایک طویل عرصے سے نافذ ہیں تاہم پروازوں میں سوار ہونے سے قبل مسافروں کو مثالی طور پر ایک اطلاع دی جانی چاہئے۔ میرے علم میں ان قوانین کو سختی سے نافذ نہیں کیا گیا تھا۔”

ڈیرا ٹریولس کے جنرل منیجر سدھیش ٹی پی نے کہا کہ “ہندوستان سے متعدد مسافر دبئی کے راستے سعودی عرب اور کویت جا رہے ہیں۔ ان زمرے کے مسافر ان ضروریات کو پورا نہیں کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ “حالات کو دیکھتے ہوئے یہ بات بھی ہمیں سمجھ میں آگئی ہے کہ ایئر لائنز اب ایسے مسافروں کو جو ہندوستان سے پروازوں میں سوار ہونے کے بنیادی معیار پر پورا نہیں اتر رہی ہیں کی اجازت نہیں دے رہی ہیں۔” “ہم اپنے ٹکٹ منسوخ کردیں گے”

جمعرات کی صبح ہوائی اڈے کے حکام نے مسافروں کو کھانے کے کوپن فراہم کیے۔ کنور سے رات 9 بجے گوئیر کی پرواز میں پھنسے ہوئے ایک پھنسے ہوئے مسافر امل دیو نے کہا کہ “یہ دبئی کا میرا تیسرا دورہ ہے۔ میں نے ابھی ایک تجارتی بحریہ کا کورس مکمل کیا اور میرے کزن نے مجھے دبئی میں کیڈٹ کی حیثیت سے یاٹ میں نوکری دلا دی۔ مجھے امید تھی کہ میں یہاں جاؤں گا اور روزگار کے ویزا میں شفٹ ہوجاؤں گا۔

دیو نے مزید کہا کہ “امیگریشن حکام نے مجھ سے پوچھا کہ کیا میرے پاس 2،000 درہم ہوٹل بکنگ ہے؟ جس کا میں نے جواب “نہیں” میں دیا۔ میرے ساتھ ساتھ 27 دیگر ملیالی مسافروں کو ٹرمینل 3 منتقل کیا گیا جہاں گذشتہ رات سے ہم پھنسے ہوئے ہیں۔”

23 سالہ نوجوان پریشان ہے کہ اسے ہندوستان واپس جانے کو کہا جاسکتا ہے۔ “میرے والد سات ماہ قبل چل بسے تھے۔ وہ یہاں کام کرتے تھے اور میں اپنے گھر والوں کی کفالت کے لئے روزی روٹی کی تلاش میں یہاں آیا تھا۔

ایک اور مسافر نے کہا کہ “اگر ہمیں پرواز میں سوار ہونے سے قبل ہوائی اڈے پر آگاہ کیا جاتا تو ہم اپنے ٹکٹ منسوخ کردیتے اور مختلف انتظامات کرتے۔”

حوالہ
خلیج ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ