دنیا

متحدہ عرب امارات کے بعد بحرین نے بھی اسرائیل کو تسلیم کر لیا

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ بحرین اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے پر متفق ہے۔

تفصیلات کے مطابق بحرین نے جمعہ کے روز اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے معاہدے پر متحدہ عرب امارات کے ساتھ شمولیت اختیار کر لی ہے جس کا مقصد مشرق وسطی میں تناؤ کو کم کرنا ہے۔

وائٹ ہاؤس نے کہا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بحرین کے شاہ حماد بن عیسیٰ الخلیفہ اور اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو دونوں سے فون پر بات کرنے کے بعد اس خبر کو ٹویٹ کیا۔

ریاستہائے متحدہ امریکہ، بحرین اور اسرائیل نے مشترکہ بیان میں کہا کہ “مشرق وسطی میں مزید امن کے لئے یہ تاریخی پیشرفت ہے۔”

انہوں نے کہا کہ “ان دو متحرک معاشروں اور ترقی یافتہ معیشت کے مابین براہ راست بات چیت اور تعلقات کا آغاز مشرق وسطی کی مثبت تبدیلی کو جاری رکھے گا اور خطے میں استحکام ، سلامتی اور خوشحالی میں اضافہ کرے گا۔”

متحدہ عرب امارات نے گذشتہ ماہ اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے پر اتفاق کیا تھا۔

اس معاہدے پر 15 ستمبر کو ٹرمپ کی میزبانی میں وائٹ ہاؤس کی ایک تقریب میں دستخط ہونے والے ہیں اور اس میں اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو اور متحدہ عرب امارات کے وزیر خارجہ شیخ عبد اللہ بن زید النہیان بھی شریک ہوں گے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: کویت سے دو اہم خبریں

بحرین سعودی عرب کا قریبی اتحادی اور امریکی بحریہ کے علاقائی ہیڈ کوارٹر کا مقام ہے۔ معاہدے کے بعد بحرین چوتھا عرب ملک بن گیا ہے جس نے کئی دہائیوں قبل مصر اور اردن کے ساتھ سفارت خانوں کا تبادلہ کرنے کے بعد اسرائیل کے ساتھ اس طرح کا معاہدہ کیا تھا۔

گذشتہ ہفتے بحرین نے کہا تھا کہ وہ اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے درمیان پروازوں کو اپنی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دے گا۔ اس کے بعد سعودی عرب کے اس فیصلے کے بعد ایک اسرائیلی کمرشل ہوائی جہاز کو متحدہ عرب امارات کے راستے میں اس پر پرواز کرنے کی اجازت دی گئی۔

حوالہ: خلیج ٹائمز

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ