پاکستان

پاکستان نے متحدہ عرب امارات اور اسرائیل معاہدے پر بیان دے دیا

اسلام آباد 14 اگست: پاکستان نے کہا ہے کہ متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے تاریخی معاہدے کے “دور رس مضمرات” ہیں اور فلسطین کی امنگوں سے اس کے “نقطہ نظر” کی رہنمائی ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق دفتر خارجہ (ایف او) نے ایک بیان میں کہا ہے کہ “ہم نے مشترکہ بیان کو نوٹ کیا ہے جس میں متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے درمیان تعلقات کو معمول پر لانے کے معاہدے کا اعلان کیا گیا ہے۔ یہ ایسی ترقی ہے جس میں دور رس اثرات مرتب ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان فلسطینی عوام کے حق خودارادیت کے جائز حقوق کے مکمل ادراک کے لئے مستقل وابستگی رکھتا ہے۔ مشرق وسطی کے خطے میں امن و استحکام پاکستان کی بھی اولین ترجیح ہے۔
خطے میں ایک منصفانہ ، جامع اور پائیدار امن کے لئے اس مسئلے پر پاکستان کے دیرینہ موقف کا اعادہ کرتے ہوئے وزارت خارجہ نے کہا کہ “پاکستان نے اقوام متحدہ اور او آئی سی کی قراردادوں کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی قانون کے مطابق دو ریاستی حل کی مستقل حمایت کی ہے۔”
“ہمارے اندازہ سے پاکستان کے نقطہ نظر کی رہنمائی ہوگی کہ فلسطینیوں کے حقوق اور امنگوں کو کس طرح برقرار رکھا جاتا ہے اور علاقائی امن ، سلامتی اور استحکام کس طرح محفوظ ہے۔”

متحدہ عرب امارات اور اسرائیل میں کیا معاہدہ ہونے جا رہا ہے؟

جمعرات کو امریکہ کی طرف سے اعلان کردہ اس معاہدے میں اسرائیل نے متحدہ عرب امارات کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے عوض فلسطینی سرزمینوں کی منصوبہ بندی سے وابستگی معطل کرنے کا وعدہ کیا ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: متحدہ عرب امارات اور اسرائیل میں معاہدہ طے پا گیا

وائٹ ہاؤس کے عہدیداروں نے بتایا کہ یہ معاہدہ اسرائیل ، متحدہ عرب امارات اور امریکہ کے مابین طویل گفتگو کا نتیجہ ہے۔
تینوں ممالک کی طرف سے جاری مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ ، اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو اور ابوظہبی کے ولی عہد شہزادہ شیخ محمد بن زاید نے “اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے مابین تعلقات کو معمول پر لانے پر اتفاق کیا ہے”۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ” اس سفارتی پیشرفت کے نتیجے میں اور متحدہ عرب امارات کی حمایت سے صدر ٹرمپ کی درخواست پر اسرائیل مغربی کنارے کے ان علاقوں کے بارے میں خود مختاری کا اعلان معطل کردے گا” جن کا ٹرمپ کے اعلان کردہ امریکی منصوبے میں تصور کیا گیا تھا۔

وائٹ ہاؤس کے عہدیداروں نے بتایا کہ اس معاہدے کے تحت یروشلم کے پرانے شہر کی مسجد اقصیٰ میں مسلمانوں کو زیادہ سے زیادہ رسائی فراہم کرنے کا تصور کیا گیا ہے۔

ٹرمپ نے کہا کہ “یہ معاہدہ زیادہ پرامن ، محفوظ اور خوشحال مشرق وسطی کی تعمیر کی طرف ایک اہم قدم ہے۔ اب جب برف پگھل چکی ہے تو مجھے توقع ہے کہ مزید عرب اور مسلم ممالک متحدہ عرب امارات کی ’برتری‘ کی پیروی کریں گے اور اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لائیں گے۔

ٹرمپ نے مزید کہا ، “ہم دوسری اقوام کے ساتھ بھی اس پر تبادلہ خیال کر رہے ہیں جو مشرق وسطی میں امن دیکھنا چاہتے ہیں چنانچہ آپ دوسروں کو بھی اس کی حمایت میں دیکھیں گے۔” مزیدمعاملات طے پا رہے ہیں جس کے بارے میں میں ابھی بات نہیں کرسکتا لیکن وہ معاملات انتہائی مثبت اور سب کے فائدے میں ہیں۔”

حوالہ
The News
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ