پاکستان

پی آئی اے کا طیارہ گر کر تباہ، متعدد ہلاکتوں کی اطلاع

اسلام آباد 22 مئی: آج بروز جمعہ کی سہ پہر کراچی کے جناح بین الاقوامی ہوائی اڈے پر لینڈ کرنے سے قبل پی آئی اے کا ایک مسافر طیارہ آبادی والے علاقے پر گر کر تباہ ہوگیا۔ آرمی کوئیک رسپانس فورس ، رینجرز ، پولیس اور امدادی کارکن جائے وقوعہ پر پہنچ گئیں کی۔

لاہور سے کراچی جانے والے طیارے کے ساتھ ساتھ متعدد مکانات اور گاڑیاں بھی تباہ ہوگئیں۔ طیارہ ایئربس 320 جس میں میں 91 مسافر کے علاوہ عملے کے 7 افراد بھی سوار تھے۔

طیارے میں بینک آف پنجاب کے صدر مسعود ظفر بھی سوار تھے جنہیں شدید زخمی حالت میں سول اسپتال کراچی منتقل کردیا گیا ہے جہاں اب تک قریب 10 سے 12 زخمی افراد کو داخل کرایا گیا ہے۔

ابتدائی اطلاعات کے مطابق طیارہ تکنیکی خرابی کی وجہ سے جناح گارڈن ایریا میں گر کر تباہ ہوا جس کی تصدیق پی آئی اے کے ترجمان نے کی۔ رہائشی علاقہ ایئر پورٹ سے ایک کلومیٹر دور ماڈل کالونی سے متصل ملیر کینٹ میں واقع ہے۔ افسوسناک واقعے سے پہلے کپتان نے ہوائی ٹریفک کنٹرول کو کچھ تکنیکی خرابی کے بارے میں آگاہ کیا جس کے بعد طیارہ ریڈار سے غائب ہوگیا کیونکہ حادثے سے چند منٹ قبل ہی رابطہ ختم ہوگیا تھا۔ سول ایوی ایشن اتھارٹی نے بتایا کہ کپتان طیارے کا کنٹرول کھو بیٹھا ہے۔ ہوائی جہاز کے کپتان کو یہ کہتے ہوئے سنا جاسکتا ہے کہ “ہم انجن کھو بیٹھے ہیں” جس کے بعد انہوں نے رابطہ کھونے سے قبل ہوائی اڈے کے ٹریفک کنٹرولر کے ساتھ آخری مواصلات کے دوران انہوں نے “Mayday ، Mayday” دہرایا تھا۔ سول ایوی ایشن اتھارٹی نے بتایا کہ فلائٹ نمبر پی کے 8303 دوپہر 1 بجے لاہور سے روانہ ہوگئی تھی اور طے شدہ شیڈول کے مطابق اسے 2 بجکر 45 منٹ پر کراچی پہنچنا تھا۔

پی آئی اے کے ترجمان اطہر نے بتایا کہ طیارہ فٹ ہے اور اس معاملے پر تمام افواہیں بے بنیاد ہیں۔ اس وجہ کے بارے میں تفصیلات صرف سی اے اے ، پی آئی اے اور ایئربس کے نمائندوں پر مشتمل ٹیم کے ذریعہ مشترکہ تفتیش پر ہے۔


ٹی وی فوٹیج میں عمارتوں اور کاروں کو آگ نے لپیٹے ہوئے گھروں کو تباہ کردیا۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق اس علاقے میں کم از کم آٹھ سے دس مکانات برباد ہوچکے ہیں جبکہ اب تک کم سے کم 10 لاشیں برآمد ہوچکی ہیں اور زخمیوں کو مختلف اسپتالوں میں منتقل کیا گیا ہے علاوہ ازیں 25 سے زائد گاڑیاں یا تو تباہ ہو گئیں ہیں یا انھیں نقصان پہنچا ہے۔


دوسری جانب وزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ نے تمام اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی اور حکام کو امدادی

کاروائی شروع کرنے کی ہدایت کردی
دریں اثنا وزیر اعظم عمران خان نے طیارے کے حادثے کی تحقیقات کا حکم دے دیا جبکہ چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نیز شہباز شریف ، آصف علی زرداری ، بلاول بھٹو زرداری اور مولانا فضل الرحمان سمیت اعلی سیاسی رہنماؤں نے سانحہ پر افسوس کا اظہار کیا۔

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ