کویت

کویت میں گلف ریلوے پٹریوں کا کام اسی سال متوقع

کویت اردو نیوز 11 جنوری: گلف ریلوے پٹریوں کے ڈیزائن پر کام2021 دسمبر میں شروع کیا جائے گا۔

تحریر جاری ہے‎

روزنامہ القبس کے مطابق گلف ریلوے پٹریوں کے ڈیزائن پر کام 2 دسمبر 2021 کو شروع کیا جائے گا اور 2 اگست 2023 تک 20 ماہ تک جاری رہے گا۔ یکم جون 2021 سے 2 دسمبر 2021 کے دوران ایک بین الاقوامی مشیر کا انتخاب کیا جائے گا۔ اس منصوبے کی فلوٹشن ابتدائی طور پر 4 دسمبر 2023 کو طے شدہ ہے اور اس کی توسیع 4 ستمبر 2024 تک ہوگی۔

ایک سرکاری رپورٹ کے مطابق غیر ملکی سرمایہ کاروں کے ذریعہ اس منصوبے پر عمل درآمد کے لئے طے شدہ نظام الاوقات کے مطابق 2025 کی پہلی سہ ماہی میں تعمیراتی مرحلے کا آغاز متوقع ہے بشرطیکہ کوئی غیر متوقع رکاوٹیں پیش نہ آئیں۔

سرکاری اداروں کے مابین اراضی کے تنازعات اور متبادل اراضی کے مختص ہونے کے بارے میں میونسپل کونسل کے ذریعہ ضروری منظوریوں کے اجرا کی رفتار کو بھی تیز کردیا گیا ہے۔ حکومتی رپورٹ میں اصرار کیا گیا ہے کہ خلیجی ریلوے کے اس مرحلے پر خلیجی ممالک کے درمیان ٹریکس کو ترجیح دی جائے گی۔ جس کا تعلق خلیج تعاون کونسل کے ممبر ممالک کے معاہدے سے ہے جبکہ دوسری پٹریوں کی تعمیر بھی بعد میں شروع ہوجائے گی۔ اس منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے سرکاری اور نجی شعبوں، مقامی و غیر ملکی یا ان کے مابین تعاون کے مابین شراکت سے ہوگا۔

رپورٹ کے مطابق ریلوے پٹریوں کا آغاز ملک کے جنوب خاص طور پر سعودی عرب کی سرحدوں سے ہوگا۔ اس منصوبے کا پہلا مرحلہ چار اسٹیشنوں پر مشتمل ہوگا جو نواصیب کے علاقے سے شروع ہوکر فروانیہ گورنریٹ میں اختتام پذیر ہوں گے جو اسٹوریج، لوڈنگ، مسافرخانے اور بحالی اسٹیشنوں پر مشتمل ہوں گے جن کی کل لمبائی 111 کلومیٹر ہو گی اور تخمینی لاگت 603 ملین دینار ہے۔

اسی تناظر میں سرکاری ذرائع نے ملک میں ریلوے ٹریک منصوبے پر عمل درآمد کے لئے کمیٹی کے قیام کے سلسلے میں وزارتی قرارداد نمبر 9/2020 کے اجراء کا عندیہ دیا۔ یہ کمیٹی اس منصوبے سے متعلق تمام معلومات اکٹھا کرنے اور منصوبوں کی تاخیر کے جواز کا تعین کرنے کے لئے ڈیزائن اور رہنما خطوط پر نظرثانی کرنے کا کام انجام دے گی اور پھر اس پر عمل درآمد کی سہولت سے متعلق ایک بیان جاری کرے گی۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ قومی ریلوے پروجیکٹ ایک مربوط نیٹ ورک پر مشتمل ہے جو ملک کے شمال اور جنوب کو ملاتا ہے۔ اس میں 565 کلومیٹر کی لمبائی کے ساتھ تین ٹریک شامل ہیں۔ خلیجی ، تجارتی اور اقتصادی، مسافروں کی آمدورفت ، سامان کی نقل و حمل کے کاموں کے ساتھ ساتھ دیکھ بھال کرنے والے اسٹیشنوں میں کام کرنے والے ایک منصوبے کے علاوہ متعدد اسٹیشنوں کو لوڈنگ اور اسٹوریج میں مہارت حاصل ہوگی۔

وزارت خزانہ میں ریاستی املاک کے محکمہ کے نمائندے نے بتایا کہ ریلوے کے راستے میں رکاوٹ پیدا کرنے والی 13 زرعی ہولڈنگز کے مالکان کو معاوضے کی جانچ اور ادائیگی مکمل ہوچکی ہے۔ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ اتھارٹی کے نمائندے نے زور دے کر کہا کہ اس منصوبے پر عمل درآمد مکمل ہونے سے پہلے سبسکرپشن پیش کرنا ممکن نہیں ہے کیونکہ شہریوں کے لئے خریداری کا عمل ریلوے منصوبے کے مکمل کام کے بعد شروع ہوگا۔

کویت بلدیہ کے نمائندے نے عوامی پیسے ضائع ہونے سے بچنے کے لئے بغیر کسی تبدیلی کے تیسرے منصوبے کے مطابق موجودہ پٹریوں کے تحفظ کی اہمیت پر زور دیا بشرطیکہ بین الاقوامی انجینئرنگ کا ایک مشیر پٹریوں کے ڈیزائن پر مفصل مطالعہ کرنے کے لئے دستیاب ہو۔

فالو اپ اور عمل درآمد کمیٹی نے ریلوے منصوبے کو تین پٹریوں میں تقسیم کیا جس میں خلیج کے لئے خلیجی ٹریک، تجارتی راستہ جو مبارک الکبیر بندرگاہ سے ملتا ہے اور اقتصادی راستہ جو شمالی خطے کو جوڑتا ہے۔

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ