کویت

کویت: سکولوں میں تعلیم بحال کرنے کی تجویز پیش کر دی گئی

کویت اردو نیوز 31 اکتوبر: تعلیمی ماہرین کی جانب سے اسکولوں کو دوبارہ کھولنے سے متعلق تجویز پیش کر دی گئی ہے۔

روزنامہ القبس کی رپورٹ کے مطابق کورونا بحران کے دوران تعلیمی نظام درہم برہم ہوکر رہ گیا ہے بچوں میں موٹاپے کی شکایات اور آن لائن کلاسس کے باعث مسلسل آنکھیں الیکٹرانک ڈیوائسس پر جم کر رہ گئی ہیں جسکے سبب نا صرف صحت کے مسائل جنم لے رہے ہیں بلکہ معاشرتی میل جول کے مثبت پہلو بھی کہیں کھو گئے ہیں۔ اس منفی صورتحال کے باعث اسکولوں کو دوبارہ کھولنے اور معمول کے مطابق تعلیمی نظام کا قائم کرنے کے مطالبات منظر عام پر آرہے ہیں۔ COVID-19 سے نمٹنے کے لئے احتیاطی ضروریات کے مطابق ریموٹ لرننگ ایک عارضی مرحلہ ہے جس کے بعد عام طور پر مطالعے کو دوبارہ شروع کرنا ہوگا۔ اس تناظر میں ابتدائی تعلیم کے ماہر، تعلیمی قیادت اور تخلیقی صلاحیتوں کے ڈاکٹر دانا المشعان نے اسکولوں میں پڑھائی میں بتدریج واپسی کا مطالبہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ والدین کو لازمی طور پر اس درخواست پر دستخط کرنے چاہیں جس میں بچوں کے مستقبل کے تحفظ پر مبنی مطالبات شامل ہیں اور اس کی ابتداء “Education is an Acquired Right” کے عنوان سے چلائی جانے والی ایک مہم کے تحت، متعلقہ حکام خصوصا وزارت تعلیم کی وزارت کو پیش کریں۔ ڈاکٹر المیشان نے انکشاف کیا کہ “کویت میں تعلیم خاص طور پر کوویڈ 19 وبائی بیماری کی روشنی میں غیر منحرف فیصلوں کا شکار ہوگئی ہے۔ حکومت اس بحران سے خاکستری سے نمٹ رہی ہے۔ وزارت نے تعلیم کے حق کا دفاع نہیں کیا ہے بلکہ والدین اور ماہرین ہی یہ کردار ادا کررہے ہیں۔

انہوں نے COVID-19 پھیلنے سے متعلق وزارت کی کردار کے بارے میں کہا کہ “مارچ میں وزارت نے فوری ضرورت کے باوجود فاصلاتی تعلیم کا نفاذ نہیں کیا تھا جبکہ نجی اسکولوں خاص طور پر غیر ملکی اسکول اس نظام کو نافذ کرنے میں کامیاب رہے تھے حالانکہ اس وقت یبلک ایجوکیشن نے اسے مسترد کردیا تھا۔ بعدازاں وزارت نے ان اسکولوں کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اکتوبر میں اس کا واضح منصوبہ نافذ کیا۔

ڈاکٹر المیشان نے زور دے کر کہا کہ اب ایک بار پھر غلطی دہرائی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ “والدین کو اپنے بچوں کو اسکولوں میں تعلیم دلانے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ اب موجودہ حالات اس کی اجازت دیتے ہیں۔ 20 سے زیادہ غیر ملکی برطانوی، امریکی اور دو لسانی اسکول ہیں جو گذشتہ مئی سے طالب علموں کی اسکولوں میں واپسی کے لئے تیار ہیں۔ ان کے پاس تمام صلاحیتیں ہیں اور احتیاطی تدابیر موجود ہیں جو ہمارے بچوں کی صحت کو محفوظ رکھیں گیں تاہم وزارت صحت اور وزارت تعلیم کو اس بارے میں تحفظات ہیں۔ یہ انتہائی خطرناک ہے خاص طور پر اب تمام ماہرین طلباء کو کلاس روم میں واپس لانے کی ضرورت پر زور دے رہے ہیں۔

ڈاکٹر المشان نے روشنی ڈالی کہ حکومت نے اپنے پانچ مراحل میں نام نہاد معمول کی زندگی میں واپسی کے منصوبے میں طلبہ کی تعلیم کو شامل نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ “فی الحال زندگی معمول پر آنا ناممکن ہے جیسا کہ کوویڈ 19 کے بحران سے پہلی تھی لہذا لازمی ہے کہ ہم کچھ مختلف طریقہ کار سوچیں اور آہستہ آہستہ تعلیمی زندگی کو بحفاظت اور بہتر انداز میں بحال کریں جبکہ والدین، ​​طلباء اور ہر خاندان کو اس سلسلے میں انتخاب کرنے کا حق دیں۔ ڈاکٹر المیشان نے تصدیق کی کہ ہائبرڈ سسٹم کے ذریعہ اسکولوں کو دوبارہ شروع کرنے کے قابل اعتماد طریقے موجود ہیں تاکہ طلباء کی حاضری اسکول کے اندر تقسیم ہوجائے بشرطیکہ ایک کلاس میں طلباء کی تعداد 7 اور 10 کے درمیان ہو۔ انہوں نے اشارہ کیا کہ “یہ نظام کچھ خلیجی ممالک جیسے قطر اور بحرین میں موجود ہے جبکہ ان ممالک میں COVID-19 کے کیس زیادہ تعداد میں موجود ہیں۔

تعلیم ان دونوں ممالک کی ترجیح ہے نیز حالیہ عالمی مطالعے سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ اسکولوں کے آغاز کے ساتھ ہی کیسوں کی تعداد میں اضافہ نہیں ہوا ہے۔ ڈاکٹر المشعان نے عوامی تعلیم کے شعبے سے مطالبہ کیا کہ وہ کچھ غیر ملکی نجی اسکولوں کے عالمی تجربات سے استفادہ حاصل کریں۔ انہوں نے کہا کہ “اس میں کوئی مضائقہ اور شرم کی بات نہیں ہے کہ ہمیں ایک وبائی مرض کا سامنا کرنا پڑرہا ہے جس میں جدید حل تلاش کرنے کے لئے ٹھوس کوششوں کی ضرورت ہے جو تعلیمی عمل میں مدد فراہم کریں اور اسکولوں میں حفاظتی اقدامات مہیا کریں۔

ڈاکٹر المشان نے انکشاف کیا کہ “کچھ والدین نے اپنے بچوں کے لئے بیسمنٹ اسکول کھولے ہیں۔ مائیں، اساتذہ کے ساتھ معاہدہ کرتے ہوئے اپنے گھروں میں اپنے بچوں کو گروپ کلاس میں پڑھاتے ہیں۔ ان خصوصی کلاسوں میں طلبہ کی تعداد دس تک پہنچ سکتی ہے۔

مزید پڑھیں: مشینوں میں سے ڈرائیونگ لائسنس حاصل کرنا انتہائی مشکل ہو گیا

ڈاکٹر المشعان نے وزارت تعلیم کے تمام عہدیداروں کو ایک پیغام بھیجا جس میں کہا گیا ہے کہ ” حصولِ تعلیم حق ہے۔” والدین کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ اپنے بچوں کے مستقبل کا دفاع کریں۔ ہمیں اسکولوں میں واپسی کا انتخاب کرنے کا حق دیں اور ہر فرد کو اس بات کا انتخاب کرنے دیں۔ بہت سارے لوگوں کا خیال ہے کہ اسکولوں کو بند کرنے کا مقصد بچوں کو ایک دوسرے کے ساتھ گھل مل جانے سے بچانا ہے اور انہیں COVID-19 وائرس سے بچانا ہے۔

ڈاکٹر المشان نے اصرار کیا کہ یہ عقیدہ غلط ہے “کیونکہ ہمارے بچے پارکوں میں ایک دوسرے سے مل رہے ہیں گھر، کلب ، مال ، سوسائٹی اور دیگر جگہوں پر مل رہے ہیں لہذا صحت کی ضروریات کو بروئے کار لاتے ہوئے اسکولوں کا افتتاح کرنا بہتر ہے “گھروں کے اندر زیر زمین رکھے ہوئے پارٹیوں ، محفلوں اور کلاس رومز میں بچوں کو چھوڑنے سے کہیں بہتر ہے کہ سخت صحت سے متعلق کنٹرول کی درخواست کے ساتھ طلباء کا اسکول واپس لایا جائے۔

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ