کویت

کویت: کرفیو کی بجائے بھاری جرمانے عائد کرنے کا فیصلہ

کویت اردو نیوز 12 اکتوبر: جرمانے اور قید کے نفاذ کے بعد کرفیو اور لاک ڈاؤن کی گنجائش نہیں بچے گی۔

تفصیلات کے مطابق باخبر ذرائع نے الأنباء کو خصوصی بیانات دیتے ہوئے کہا کہ کابینہ نے ملک میں دوبارہ کرفیو نافذ کرنے کے فیصلے کو نہیں اپنایا ہے اور یہ وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزراء کی کونسل کے ذریعہ گردش کردہ شرائط و ضوابط کی خلاف ورزی کرنے والوں پر فوری جرمانے کا اطلاق ہوگا۔

دوسری جانب “عرب ٹائمز” نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا کہ وزراء کونسل صحت کے اقدامات پر عمل پیرا ہوتے ہوئے ملک میں کورونا وائرس بحران کا مقابلہ کرنے کے لئے جلد ہی سخت اقدامات پر عمل پیرا ہو رہی ہے۔ ذرائع کا خیال ہے کہ مواصلاتی بیماریوں کے قانون میں طے شدہ سزاؤں کو وبائی بیماریوں کی فہرست میں کورونا وائرس شامل کرکے فعال کیا جائے گا جس پر قومی اسمبلی نے مارچ میں حکومت میں ترمیم کرنے اور اس کا حوالہ دینے پر اتفاق کیا تھا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ قانون کی دفعات کا اطلاق کیا جائے گا جس میں اجتماعات شامل ہیں اور خاص طور پر وہ لوگ جو جان بوجھ کر صحت کی احتیاطی تدابیر پر عمل نہیں کرتے اور ان کی وجہ سے پوری کمیونٹی کو خطرہ لاحق ہوتا ہے۔ انفیکشن کی وجہ سے لاک ڈاؤن اور کرفیو کا سہارا لینے کے بجائے سخت قانون نافذ کرنا بہترین انتخاب ہے۔

مزید پڑھیں: مکمل کرفیو معیشت کی موت ہو گی

اس سزا کے اطلاق کے جواب میں “مواصلاتی بیماریوں کے قانون کی دفعات کی کسی بھی خلاف ورزی یا وزیر صحت کے جاری کردہ فیصلوں کی خلاف ورزی کی وجہ سے 3 ماہ سے زیادہ کی مدت اور 5 ہزار دینار یا دونوں میں سے زیادہ ایک کی سزا ہوگی اس کے علاوہ اس قانون کے آرٹیکل 15 میں مذکورہ فیصلوں یا اقدامات کی ہر خلاف ورزی کے لئے مجرم کو 6 ماہ سے زیادہ کی مدت کی قید اور 10،000 دینار یا ان دو میں سے ایک جرمانے کی سزا بھی ہوگی۔

روزنامہ الأنباء کی اطلاع کے مطابق جان بوجھ کر کسی دوسرے فرد میں بھی انفیکشن کی منتقلی کا سبب بننے والے افراد کو جرمانے میں 10 سال قید کی سزا اور 30،000 دینار تک جرمانہ یا ان دونوں سزاؤں میں سے ایک سزا ہو گی۔

حوالہ
عرب ٹائمز
حوالہ
الأبناء
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

Open

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ