کویت

کویت: ویکسین آنے کے بعد ہی ایئرپورٹ کو مکمل طور کھولا جائے گا

کویت اردو نیوز 21 ستمبر: کوویڈ ویکسین دستیاب ہونے پر ہی ائیرپورٹ مکمل طور پر آپریشنل ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق کمرشل فلائٹس کی بحالی کے لئے ایگزیکٹو کمیٹی نے طے کیا ہے کہ مخصوص ادوار کے دوران مستقل جانچ پڑتال کے لئے وزارت صحت کے طریقہ کار کے مطابق طیارے اور تکنیکی عملے کو 14 روزہ گھریلو قرنطین مدت سے مستثنیٰ قرار دیا جائے گا۔ یہ بات کویت کے ہوائی اڈے کے امور کے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل صالح الفداغی نے اپنے ایک بیان میں کہی کیونکہ فی الحال تمام آنے والے افراد کو فی الحال گھر یا ادارہ جاتی قرنطین کے بارے میں کوئی نیا طریقہ کار نہیں لایا گیا ہے۔

الفداغی نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ کمیٹی نے صحت اور احتیاطی تقاضوں کے مطابق عوام کے لئے ریسٹورانٹ اور کیفے میں خدمات دوبارہ شروع کرنے کے فیصلہ کے ساتھ ساتھ مذہبی عمارتوں کو بھی کھولنا ان سفارشات کے بعد سامنے آیا جو سول ایوی ایشن کے ذریعہ پیش کیا گیا تھا جس میں صحت حکام کی منظوری بھی تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ سفری ضروریات مستقل جائزہ لینے کے ساتھ مشروط ہیں ، کویت بین الاقوامی ہوائی اڈہ پر تجارتی پروازوں کی بحالی کے منصوبے کو 15 فیصد سے تجاوز نہیں کیا گیا جبکہ پہلے مرحلے کی ضروریات کے مطابق اس کا فیصلہ 30 فیصد سے تجاوز نہیں کرنا ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: 34 ممنوعہ ممالک کے شہریوں کو واپس لانے کی تیاری

الفداغی نے کہا ہے کہ “جب بھی ملک میں کورونا ویکسین دستیاب ہوگی سفری پابندیاں 100 فیصد بحال کر کے براہ راست داخلے اور خارج کی اجازت دے دی جائے گی جیسا کہ کورونا وبائی بیماری کے پھیلاؤ سے پہلے تھا۔ مسافروں پر پابندیوں میں نرمی لانے کی تجاویز کا اب بھی مطالعہ کیا جارہا ہے جس میں پی سی آر سرٹیفکیٹ کے لئے وقت کی حد 72 گھنٹوں سے بڑھا کر 96 گھنٹے تک جانا ہے۔

القبس کی رپورٹ کے مطابق گھریلو قرنطین کو 14 دن سے کم کر کے 7 دن یا اس بھی کم کرنے اور ملک میں غیر ملکی تارکین وطن کے لئے ادارہ جاتی قرنطین کی اجازت دینے کے بارے میں الفداغی نے بیان کیا کہ “صحت کے حکام اس طرح کے فیصلے کرنے میں فکرمند ہیں اور اب تک اس سلسلے میں فی الحال کوئی ترمیم نہیں کی گئی ہے۔

یاد رہے کہ ڈائریکٹر جنرل برائے سول ایوی ایشن محمد یوسف الفوزان نے وزارت صحت کے سیکرٹری اطلاعات کو ایک خط میں بھی کہا ہے کہ 14 دن کے قرنطین کی بجائے 7 دن کا کیا جائے۔

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

Open

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ