کویت

کویت: غیر ملکی اساتذہ کی جگہ کویتی اساتذہ کی تقرریوں کا فیصلہ

کویت اردو نیوز 14 ستمبر: تارکین وطن اساتذہ کی جگہ کویتی گریجویٹس کی تقرریاں کرنے کا فیصلہ کر لیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق روزنامہ الانباء کی رپورٹ کے مطابق سول سروس کمیشن (سی ایس سی) کے تیار کردہ نئے کویتائزیشن منصوبے میں وزارت تعلیم اور وزارت اوقاف اور اسلامی امور میں کام کرنے والے غیر ملکی اساتذہ کی ملازمتوں پر کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک اسٹڈیز اینڈ کالج آف آرٹس (ہسٹری ڈیپارٹمنٹ) سے فارغ التحصیل کویتی گریجویٹس کو بھرتی کرنا بھی شامل ہے۔

روزنامہ کو ایک خصوصی بیان دیتے ہوئے ذرائع نے واضح کیا کہ دونوں وزارتوں میں تعلیم اور اوقاف نے کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک اسٹڈیز سے فارغ التحصیل افراد کو تعلیمی کورس میں داخلہ لینے کے لئے کہا ہے جو اساتذہ کو استاد کی حیثیت سے کام کرنے کا اہل بناتا ہے۔ اس کا مقصد اسلامی تعلیم سے آراستہ اہل افراد کی تقرری ہے جس میں کالج آف شریعہ اور اسلامک اسٹڈیز کے گریجویٹس کے ساتھ تعلیم اور بنیادی تعلیم کے کالجوں سے فارغ التحصیل طلباء بھی شامل ہیں۔

تاہم وزارت اوقاف اور اسلامی علوم نے ابھی تک کالج آف شرعیہ اور اسلامی علوم سے فارغ التحصیل طلباء کی ضرورت کے بارے میں CSC کو آگاہ نہیں کیا ہے۔ دوسری طرف وزارت تعلیم سی ایس سی کو اسلامی تعلیم اور تاریخ کے شعبوں میں آنے والے اساتذہ کی تعداد کے بارے میں مطلع کرے گی نیز ملازمین کو کویتائزیشن کے منصوبے کے نفاذ کے مطابق مذہبی مشاورت کے عہدوں پر فائز ہونے کے بارے میں بھی آگاہ کرے گی۔

یہ خبر بھی ضرور پڑھیں: اقامہ جلد سے جلد لگوائیں ورنہ بھاری جرمانہ ہو گا

ذرائع نے انکشاف کیا کہ سی ایس سی نے حال ہی میں نامزدگی کے تیز رفتار طریقہ کار کو اپنایا ہے جو اس کی متعلقہ مختلف سرکاری ایجنسیوں کی ضرورت کے مطابق کیا جاتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سی ایس سی نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ سرکاری اداروں سے بات چیت کے بغیر نامزدگی کا کوئی عمل نہیں ہوگا ، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ سرکاری شعبے میں کام کرنے کے خواہشمند افراد کے لئے اندراج کا عمل جاری ہے اور 16 اکتوبر کو ایک بار پھر یہ دروازہ کھولا جائے گا۔

سی۔ایس۔سی نے کویت یونیورسٹی کو کچھ شعبوں میں اسپیشلائزیشن کے حوالے سے آگاہ کیا ہے۔اسلامی قانون سمیت کئی مضامین میں اسپیشلائزیشن کی شرح وزارتوں کی ضرورت سے تجاوز کرچکی ہیں لہذا ان مضامیں میں اسپیشلائزیشن کے لئے داخلوں کو محدود کردیا جائے ۔ اسکے علاوہ تاریخ ، نفسیات اور فلسفہ کے محکموں میں داخلے کی تعداد کو کم کرنے پر بھی زور دیا گیا۔

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

Open

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ