کویت

کویت: ایک اور لاک ڈاؤن تباہی پھیلا سکتا ہے

کویت اردو نیوز 10 ستمبر: ایک اور لاک ڈاؤن ملکی معیشت کے لئے تباہی ثابت ہوسکتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق متعدد ماہر معاشیات نے لاک ڈاؤن کی واپسی کے لئے کچھ لوگوں کے مطالبات کو مسترد کرتے ہوئے اس واضح کیا ہے کہ اس کا مطلب معیشت کی باقیات کو ختم کرنا چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں اور تجارتی سرگرمیوں کو تباہی کی طرف دھکیلنا ہے۔

اپنے مختلف  بیانات میں ماہرین نے تصدیق کی کہ لاک ڈاؤن کی واپسی کا مطلب گذشتہ چھ ماہ کے دوران مالی نقصانات سے دوچار ہونے والی بقیہ معیشت  کی تباہی کا آغاز ہوگا جس کا ازالہ مختصر وقت میں پورا کرنا مشکل ہوسکتا ہے۔

انہوں نے روشنی ڈالی کہ COVID-19 میں متاثرہ افراد کی موجودہ شرح اب بھی معمول کی بات ہے اور وزارت صحت کی جانب سے کئے جانے والے سویب ٹیسٹوں کی تعداد میں اضافے کے بعد ان تعداد میں اعلان شدہ اضافہ ہوا ہے جس کا مطلب ہے کہ یہ تعداد روزانہ سویب ٹیسٹ کی تعداد میں اضافہ کے ساتھ ذیادہ ہوگی۔

روزنامہ الأنباء کی رپورٹ کے مطابق ماہرین نے لاک ڈاؤن اقدامات پر عمل درآمد کی طرف واپس آنے کے بجائے ماسک پہننے اور معاشرتی فاصلے کو برقرار رکھنے کے لئے وزارت صحت کے رہنما اصولوں کی پیروی پر زور دیا۔  اس سلسلے میں ماہر معاشیات طارق العتیقی نے تصدیق کی کہ وہ ایک اور لاک ڈاؤن کے خیال کے خلاف ہیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ انفیکشن کی تعداد میں قابل ذکر اضافہ وزارت صحت کی جانب سے کئے جانے والے سویب ٹیسٹوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کی وجہ سے ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ لاک ڈاؤن کی واپسی کا خیال مختلف ممالک سے ویکسین کی دستیابی کے  اعلان کے بعد مناسب نہیں ہے خاص طور پر چونکہ دنیا کے متعدد ممالک نے COVID-19 کے خلاف ویکسین کی تیاری کا اعلان کیا ہے روس ، برطانیہ ، چین اور جاپان شامل ہیں جبکہ چینی اور جاپانی ویکسین کے ابتدائی نتائج نے عالمی اور مقامی سطح پر یکساں طور پر مثبت نتائج کی تصدیق کردی ہے۔

دوسری طرف عالمی معیشت ایک اور بندش برداشت نہیں کر سکے گی خاص طور پر عالمی معیشت  کو دنیا کے ممالک کی جانب سے لاک ڈاؤن کے نتیجے میں بڑے  نقصانات اٹھانا پڑے ہیں۔ اس کا آغاز خوردہ کاروبار ، سیاحت اور ٹریول سیکٹر سے ہوا جبکہ کئی کمپنیوں نے معاشی حالات سے نمٹنے کے لئے ملازمین کو نوکریوں سے فارغ کردیا جبکہ کئی عالمی شہرت یافتہ کمپنيوں کی برانچز بھی بند ہوگئیں اور لوگوں کی کثیر تعداد نوکریوں سے محروم ہوگئی۔معاشی بحران کے  نتیجے میں چھوٹی اور درمیانے درجے کی کمپنیوں دیوالیہ ہوگئیں۔

یہ خبر بھی پڑھیں: گاڑیوں کی رجسٹریشن فیس میں اضافہ کر دیا گیا۔

کویت دنیا میں ان ممالک میں شامل تھا جہاں  طویل پابندی کے باعث سرگرمیاں سب سے زیادہ عرصے تک معطل رہیں جو  161 دن بنتے ہیں۔

العتیقی نے کہا کہ اس معاملے کا بہترین حل ریاست میں ذمہ دار حکام کی طرف سے عائد کردہ ہدایات اور صحت کے اقدامات پر عمل کرکے اس وبائی امراض سے لڑنا ہے۔ عوامی مقامات پر ماسک پہننا ، ذاتی حفظان صحت کو برقرار رکھنا ، صحت سے متعلق حفاظت کے طریقہ کار پر عمل کرنا ، اور جب تک معمول کی زندگی میں واپسی کا منصوبہ مکمل نہیں ہوتا ہے ان ہدایات پر اطلاق شامل ہے۔

دریں اثناء ماہر معاشیات ڈاکٹر خالد الجیروی نے کہا کہ لاک ڈاؤن سے کوئی ٹھوس نتائج برآمد نہیں ہوسکے کیونکہ لاک ڈاؤن کی مدت کے دوران اور اس کے بعد بھی انفیکشن کی روزانہ شرح ایک ہی ہی رہی ہے اور روزانہ کے  500 سے 700 معاملات ہیں۔

انہوں نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ COVID-19 سے متاثرہ افراد کی تعداد کے بارے میں شائع ہونے والی عالمی رپورٹس سے ظاہر ہوتا ہے کہ صرف 20 فیصد انفیکشن ہی حقیقی ہیں جبکہ باقی صرف اس بیماری کی معمولی علامت ہیں اور لوگوں کو کوئی خطرہ لاحق نہیں ہے۔

ڈاکٹر الجراوی نے اشارہ کیا کہ بہت سی جماعتوں نے مصنوعات کی اجارہ داری اور کچھ سرگرمیوں میں زیادہ منافع حاصل کرنے کے لئے COVID-19 وبائی امراض کا استحصال کیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ “کویت میں اجناس کی قیمتوں پر نظر رکھنے والے افراد نے اشیا ، مصنوعات اور خدمات کی قیمتوں میں نمایاں اضافہ دیکھا گیا ہے۔  یہ وائرس کے ابھرنے کے بعد سے شروع ہوا تھا اور آج تک جاری ہے۔  درحقیقت اس وبائی مرض کے نتیجے میں افرادی قوت خدمات کی قیمتوں میں بھی مبالغہ آمیز انداز میں اضافہ ہوا ہے جس نے تمام شعبہ ہائے زندگی کو متاثر کیا ہے۔

ڈاکٹر الجرایوی نے روشنی ڈالی کہ کویت اس وقت وزارتی کونسل کے اعلان کردہ بحالی منصوبے کے پانچویں مرحلے کی دہلیز پر ہے جس کی وجہ سے تمام مراحل کی تکمیل کے بعد اس منصوبے کے کسی آخری مرحلے پر واپس جانا غیر منطقی ہے۔ ڈاکٹر الجراوی نے اصرار کیا کہ احتیاط موجودہ مرحلے میں لاک ڈاؤن سے کہیں زیادہ موثر ہے۔

اس کے علاوہ انٹیگریٹڈ پروڈکٹ اینڈ سروسز کمپنی (آئی پی ایس سی او) کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے چیئرمین انجینئر علاء حسن نے تصدیق کی کہ دنیا کو ایک خاص نوعیت کی پیچیدہ صورتحال کا سامنا کرنا پڑا جس نے خاص طور پر معیشت اور صحت کے شعبوں کو متاثر کیا۔

اس کے علاوہ انٹیگریٹڈ پروڈکٹ اینڈ سروسز کمپنی (آئی پی ایس سی او) کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے چیئرمین انجینئر علاء حسن نے تصدیق کی کہ دنیا کو ایک خاص نوعیت کی پیچیدہ صورتحال کا سامنا کرنا پڑا جس نے خاص طور پر معیشت اور صحت کے شعبوں کو متاثر کیا۔

انہوں نے وضاحت کی کہ دنیا کے تمام ممالک نے اس حقیقت کی بنیاد پر فیصلہ لیا کہ شہریوں کی صحت معیشت کی نقل و حرکت سے زیادہ اہم ہے اور یوں ایک جامع لاک ڈاؤن کا سہارا لیا گیا  تاہم اس کی وجہ سے عالمی معیشت  پر تباہ کن اثرات مرتب ہوئے جو اب تک موجود ہیں۔

دنیا نے ابھی تک کوویڈ 19 بحران کا کوئی حل نہیں نکالا ہے سوائے اس بندش کے جس کے نتیجے میں پوری دنیا کی معیشت تقریبا  رک گئی ہے۔  بند ہونے کی وجہ سے عالمی معیشت کو تاریخی نقصان کا سامنا کرنا پڑا اور بے روزگاری کی شرح کا ایک نیا  ریکارڈ درج کیا گیا کیونکہ 22 ملین سے زیادہ افراد روزگار سے محروم ہوچکے ہیں۔

کووڈ 19 بحران کے معاشرتی اثرات گھریلو سطح پر دیکھے گئے جبکہ عالمی اور مقامی معیشت بھی اس بندش کو برداشت کرنے سے قاصر ہوگئی۔
انجیر  حسن نے کہا کہ “معاشی ، نفسیاتی اور معاشرتی حالات اب ایک اور لاک ڈاؤن کا نفاذ برداشت نہیں کر سکتے خاص طور پر اس کے بعد جب جامع لاک ڈاؤن کے نتیجے میں معیشت بہت کچھ کھو چکی ہے۔  ایک اور لاک ڈاؤن کی کوئی وجہ نہیں کیونکہ بہت سے ممالک نے اپنے شہریوں کی صحت کی حفاظت کے لئے بھاری رقوم ادا کیں ہیں  اور ہر کوئی اب بھی پچھلے جامع لاک ڈاؤن اور اس کے اثرات کی قیمت ادا کر رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ “مجھے یقین ہے کہ ہمارے تعاون اور یکجہتی کے ساتھ ساتھ احتیاطی تدابیر کو سخت کرنا ہی ایک درست حل ہے نہ کہ لاک ڈاؤن یا معیشت کے پہیے کو روکنا کیونکہ ایسی صورتحال کو کبھی بھی برداشت نہیں کیا جاسکتا”۔

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ