کویت

کویت: جعلی ویزوں کا کام کرنے والا پاکستانی شہری گرفتار

کویت سٹی 16 اگست: 20,000 ہزار کویتی دینار کے عوض گھریلو ملازمین کے 60 جعلی ویزے نکلوانے والا پاکستانی شہری پکڑا گیا۔

تفصیلات کے مطابق کمپنی کے نمائندے (مندوب) کے طور پر کام کرنے والے ایک پاکستانی تارکین وطن کو 20,000 کویتی دینار کے عوض 60 گھریلو ملازمین کے ویزے جعلسازی کرنے اور انہیں حولی میں بھارتی قومیت کے گھریلو ملازمین کے دفتر کو فروخت کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔

تفتیش کے مطابق گھریلو ملازمہ (خدامہ) کے دفاتر کے عہدیداروں نے جعلی گھریلو ملازمین کے ویزے کی رپورٹوں میں جعلسازی سے متعلق پاکستانی غیر ملکی تارکین وطن سے فروخت کے بارے میں رہائشی امور کے تفتیشی محکمے میں شکایت درج کروائی۔ معاہدے میں 20،000 دینار کے لئے 60 ویزا حاصل کرنے کا معاہدہ تھا۔ مقررہ وقت پر ملزم خدامہ کے دفتر آیا اور 60 جعلی ویزے ایک بھارتی ملازم کے حوالے کر کے 20 ہزار دینار وصول کیے۔ یہ واقعہ فروری کے آخر میں وزراء کی کونسل کی جانب سے کورونا بحران کے سبب کویت ہوائی اڈے بند رکھنے کا فیصلہ کیا جانے سے پہلے پیش آیا تھا۔

جب وزارتیں کام پر واپس آئیں تو خدامہ کے دفتر کے عہدیداروں نے ویزا جمع کروایا تاکہ انہیں نئی ​​تاریخوں کے ساتھ دوبارہ جاری کیا جاسکے کیونکہ ویزا پہلے ہی ختم ہوچکا تھا تصدیق کرنے پر پتہ چلا کہ یہ ویزے جعلی ہیں۔

یہ خبربھی پڑھیں: 31 ممنوعہ ممالک کی پروازیں بحال کرنے پر غور

پاکستانی تارکین وطن کی معلومات شیئر کی گئیں اور افسران نے ملزم کو گرفتار کرلیا۔ حکام نے اس کی رہائش گاہ پر چھاپہ مارا اور اس کے قبضے میں متعدد سامان اور مشینیں ملی ہیں۔

View this post on Instagram

محمد إبراهيم – ضبط رجال الإدارة العامة لمباحث شؤون الإقامة، أول من أمس، مقيماً باكستانياً يعمل مندوباً بتهمة تزوير 60 فيزا لعاملات منزليات من الجالية الهندية، وبيعها لمكتب خدم في منطقة حولي مقابل 20 ألف دينار. وقال مصدر أمني لـ القبس إن مسؤولي أحد مكاتب الخدم تقدموا بشكوى إلى مباحث شؤون الإقامة عن تعرضهم للنصب من قبل مندوب باكستاني أوهمهم بقدرته على استخراج تأشيرات للعاملات المنزليات، حيث اتفق معهم على استخراج 60 فيزا مقابل 20 ألف دينار. وفي الوقت المحدد حضر المتهم إلى مكتب الخدم وسلم موظفة هندية الجنسية 60 فيزا مزورة وتسلم منها 20 ألف دينار في أواخر فبراير الماضي، أي قبل إغلاق الجهات الحكومية في 13 مارس الماضي؛ بسبب جائحة كورونا. وأضاف المصدر أن مسؤولي المكتب اكتشفوا مع عودة العمل بالجهات الحكومية أن سمات الدخول مزورة، عندما تقدموا بها لاستبدالها بتواريخ حديثة بعد انتهاء صلاحيتها، حيث تبين أنها مزورة بطريقة تقنية. وأشار إلى تشكيل فريق من رجال مباحث شؤون الإقامة لضبط المتهم، حيث تبين أنه متخصص في عمليات التزوير، ويمتلك معدات حديثة جلبها من الخارج خصيصاً لعمليات التزييف والتزوير، لافتاً إلى أن رجال المباحث تمكنوا من تحديد موقعه، وداهموا مسكنه، وعثروا على أدوات التزوير، حيث اعترف بارتكابه الجرائم، وأحيل إلى النيابة العامة عقب توثيق اعترافاته. #القبس_أمن_ومحاكم

A post shared by القبس (@alqabas) on

حوالہ: روزنامہ القبس

انہوں نے بتایا کہ متعلقہ شخص جعلسازی کا ماہر ہے اور اس کے پاس جدید ساز و سامان تھا جو وہ ویزا جعلسازی کے مقصد سے بیرون ملک سے لایا تھا۔ اس نے جرائم کا ارتکاب کرنے کا اعتراف کیا اور اعترافات دستاویز کرنے کے بعد اسے پبلک پراسیکیوشن آفس بھیج دیا گیا۔

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ