کویت

کویت: بینکوں نے تارکین وطن کو قرض دینے کی سہولت بند کر دی

کویت سٹی 12 جولائی: روزنامہ عرب ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق تارکین وطن کے لئے بینکوں سے قرضے کی سہولت بھی ختم کردی گئی۔

تفصیلات کے مطابق کچھ بینکوں نے داخلی کریڈٹ پالیسیاں جاری کی ہیں جن میں غیر ملکی ملازمین خاص طور پر نجی کمپنیوں میں کام کرنے والے افراد کے لئے قرضوں کی سہولت ختم کرنے کا حکم جاری کیا گیا ہے۔

نئی کریڈٹ پالیسیوں کے مطابق بینکوں پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ کرونا وائرس وبائی بیماری کے پھیلنے کے منفی معاشی اثرات کی روشنی میں قرضوں کی فیصد میں اضافہ نہ کریں۔

تارکین وطن کے لئے صارف قرض کے حصول کے امکانات عملی طور پر کچھ سرکاری ملازمتوں تک محدود ہو چکے ہیں جن کا بینکوں نے احتیاط سے انتخاب کیا ہے اور صرف (بعض بینکوں کے مطابق) وزارت صحت ، تعلیم اور اوقاف کی وزارتوں تک ہی محدود کردیا ہے علاوہ ازیں دیگر سرکاری اداروں میں کارکنوں کے لئے قرضے روکنے کی وجہ سرکاری ملازمتوں کو قومی شکل دینے کے لئے بڑی تعداد میں تارکین وطن کا ملک چھوڑ کر جانے کا امکان بھی ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: تارکین وطن کی بڑی تعداد کویت چھوڑ کر جانے پر رضامند

ذرائع نے واضح کیا کہ نگران ہدایات اور بینکنگ کی پالیسیاں شہری اور غیر ملکیوں کے درمیان فرق نہیں کرتی ہیں بلکہ یہ ان کی کمپنیوں کے حالات کے بارے میں وضاحت کرتی ہے کیونکہ اس سال کے آغاز سے ہی غیر ملکیوں کی تنخواہوں میں زبردست تبدیلی دیکھنے میں آرہی ہے۔

بینک نجی شعبے خصوصا درمیانے اور چھوٹی کمپنیوں کے معاشی صورتحال اور اس میں غیر ملکی ملازمین کی حیثیت کے بارے میں وضاحت کی منتظر ہیں۔ دوسری طرف نجی شعبے میں تارکین وطن کو قرضوں کی فراہمی فی الحال کویت اسٹاک ایکسچینج میں درج بڑی کمپنیوں کے کارکنوں تک ہی محدود ہے جس میں بینکاری ، ٹیلی مواصلات ، سرمایہ کاری اور ریل اسٹیٹ سیکٹر زیادہ مالیاتی سالوینسی کے ساتھ شامل ہیں کیونکہ وہ متاثر نہیں ہوں گے۔

بینکاری ذرائع نے تصدیق کی کہ اس تبدیلی کا بینکاری کے شعبے پر زیادہ اثر نہیں پڑے گا کیونکہ ذاتی قرضوں کے پورٹ فولیو میں غیر ملکیوں کا حصہ بہت محدود ہے۔ سنٹرل بینک کے اعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ ذاتی قرضوں کے پورٹ فولیو کا سائز 16.3 بلین دینار تک پہنچ گیا ہے جس میں سے تقریبا 1.4 بلین دینار صارف قرضوں اور 11.8 بلین دینار کو آسان قرضوں اور بقیہ حصص غیر منقولہ قرضوں اور اسٹاک خریدنے کے لئے قرضوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔
حوالہ: عرب ٹائمز

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

Open

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ