کویت

کویت: تارکین وطن کی بڑی تعداد نے کویت چھوڑنے کی خواہش کر دی

کویت سٹی 11 جولائی: روزنامہ عرب ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق ‘مالی’ استحکام کھو جانے والے تارکین وطن اپنے بچوں کی تعلیم کے بارے میں فکرمند جبکہ والدین کی ایک بڑی تعداد نے کویت چھوڑنے کی خواہش کا اظہار کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق کوویڈ 19 کے بحران کی وجہ سے 2019-2020 کے تعلیمی سال کی معطل کیا گیا جس کی وجہ سے متعدد خاندان استحکام سے محروم ہوگئے ہیں۔ متعدد والدین نے 12 ویں جماعت سے فارغ التحصیل ہونے کے ساتھ ہی کویت چھوڑنے اور ہائی اسکول کی سند حاصل کرنے کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔
اسی دوران وزارت تعلیم نے 4 اگست کو “آن لائن” تعلیمی سال کی تکمیل کا اعلان کیا حالانکہ وزارت کی خاموشی کے مابین ابھی بھی تعلیمی پلیٹ فارم میں مسائل موجود ہیں۔

والدین نے غیر ملکی اسکولوں کے ذریعہ آن لائن تعلیمی سال کو مکمل کرنے کے لئے اٹھائے گئے اقدامات اور حتمی امتحانات کے بغیر اپنے طلباء کی کامیابی کے ساتھ ساتھ اس بحران کے آغاز سے اب تک عوامی تعلیم کے شعبے کی طرف سے اٹھائے جانے والے مبہم طریقہ کار کا موازنہ کیا۔
انہوں نے کہا کہ “ہم جس اپارٹمنٹ میں رہتے ہیں اس کے کرایہ کے طور پر ہم ماہانہ KD350 ادا کرتے ہیں۔ ہم اپنے بچوں کی تعلیم کے مستقبل کی خاطر زندگی کے ان تمام مشکل حالات سے نمٹتے ہیں۔ بدقسمتی سے وزارت تعلیم میں یہ تصویر واضح نہیں ہے جس میں تمام تعلیمی ، پارلیمانی اور عوامی حلقوں کی طرف سے تعلیمی سال کے حوالے سے درجنوں تجاویز حاصل پیش کی گئیں۔

یہ خبر بھی پڑھیں: فروانیہ کا لاک ڈاؤن ختم کرنے کی امید

وزارت کا تعلیمی سال مکمل نہ کرنا کویت میں طلبا کے لئے تعلیم کے معیار کو یقینی بنانا ہے اور ان کے تعلیمی سرٹیفکیٹ کی تعلیمی سطح کو نقصان پہنچانے سے بچاناہے۔
والدین نے بتایا کہ ان کی تکالیف جس کے بعد سے کچھ علاقوں پر مکمل پابندی عائد کی گئی تھی دن بدن بڑھتی جارہی ہے خاص طور پر چونکہ ان میں سے بہت سے ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور اس وقت ان کے پاس آمدنی کا کوئی ذریعہ نہیں ہے۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ آبادیاتی نظام میں کمی کرنے کا ڈراؤنا خواب ان کا روزانہ تعاقب کرتے ہیں لیکن اب وقت آگیا ہے کہ ان حالات کا بندوبست کیا جائے اور بچوں کی تعلیم مکمل ہوتے ہی اپنے اہل خانہ کے لئے کوئی قدم اٹھائیں۔
اس سلسلے میں تعلیمی زون کے کچھ ڈائریکٹرز نے کہا کہ تعلیمی سال کے حوالے سے جو کچھ پیش کیا جاتا ہے وہ قیاس آرائیاں ہیں جو کسی سرکاری فیصلے پر مبنی نہیں ہیں۔ انہوں نے تصدیق کی کہ وزیر تعلیم و اعلی تعلیم ڈاکٹر سعود الھربی 15 جولائی کو کابینہ کو اپنی رپورٹ پیش کریں گے جس کے بعد وزارت صحت کے ساتھ ہم آہنگی میں اس معاملے پر پارلیمنٹ میں تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

ڈائریکٹرز نے کہا کہ “ہم نے پچھلے ایک مہینے میں کابینہ کا اجلاس نہیں کیا ہے تاکہ فیصلہ کیا جاسکے کہ تعلیمی سال ختم ہونا ہے یا نہیں۔ ہم نے بحران کے آغاز سے ہی انھیں تجاویز پیش کی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ “وزارت کا نقطہ نظر بنیادی طور پر پہلی پرائمری سے گیارہویں جماعت تک کے گریڈوں کے لئے تعلیمی سال ختم کرنے کی تجویز پر عمل درآمد پر مرکوز ہے۔ (الرائ)

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ