کویت

ہم تارکین وطن کے خلاف نہیں مگر بڑھتی آبادی قبول نہیں

کویت سٹی 28 جون: “ہم تارکین وطن کے خلاف نہیں ہیں لیکن ان کی بڑی تعداد کو قبول نہیں کیا جاسکتا” یہ بات انسانی حقوق ڈویلپمنٹ کمیٹی کے سربراہ رکن پارلیمنٹ خلیل الصالح نے کہی۔

روزنامہ عرب ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق پارلیمانی انسانی حقوق ڈویلپمنٹ کمیٹی کے سربراہ رکن پارلیمنٹ خلیل الصالح نے کہا ہے کہ “آبادیاتی مسائل کے مسئلے کے فوری حل کیلئے طویل عرصے تک انتظار کرنے کی ضرورت نہیں ہے بلکہ اس پر عمل درآمد 3 ماہ کے اندر اندر فلائٹس کی بحالی کے فورا بعدہوسکتا ہے۔

یہاں ایک ملین کے قریب تارکین وطن ہیں جن سے فوری طور پر چھٹکارا مل سکتا ہے جن میں رہائش گاہ کی خلاف ورزی کرنے والے افراد بھی شامل ہیں۔ اقامہ خلاف ورزی کرنے والے افراد کی تعداد تقریبا 168،000 جبکہ عام کارکنوں کی تعداد ساڑھے 50 لاکھ ہے اس کے علاوہ وہ بھی ہیں جن کا معاہدہ وزارتوں اور سرکاری اداروں میں ختم ہو چکا ہے۔

الصالح نے بیان کیا کہ “اس اقدام کے بعد ہم اس مسئلے کو حل کرنے کے لئے تشکیل میں ترمیم اور قوانین منظور کرنے کے لئے ایک عملی منصوبہ بنانا شروع کر سکتے ہیں جس نے کورونا کے بحران کے دوران واضح طور پر ہمیں معاشرتی ، معاشی اور سلامتی طور پر متاثر کیا ہے۔

تارکین وطن کی آبادی کا تناسب 70 فیصد تک پہنچنا ایک ایسی چیز ہے جسے قبول نہیں کیا جاسکتا جبکہ وزیراعظم شیخ صباح الخالد کی طرف سے یہ بات ایک انتباہ کے طور پر سامنے آئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ “ہم کمیٹی میں ڈیموگرافکس فائل سے متعلقہ حکام کے جوابات کا انتظار کر رہے ہیں جو انھیں ایک میٹنگ میں پیش کی گئیں۔ غیر ہنر مند تارکین وطن ملک پر بوجھ ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ “کمیٹی نے پچھلی میٹنگوں میں ورکنگ پلان مرتب کیا تھا اور ہم زیادہ دیر تک انتظار نہیں کریں گے کیونکہ ڈیموگرافکس سے متعلق سرکاری کمیٹی میں فائل کے ساتھ شامل تمام حکام شامل ہیں خاص طور پر یہ کہ اس میں ایک مربوط پراجیکٹ پیش کیا گیا ہے۔ اس میں فائل سے متعلق تمام اعداد و شمار موجود ہیں۔ اس کو اس منصوبے کے عمل کو تیز کرنا چاہئے جس کے مطابق انہوں نے اجلاس میں وعدہ کیا تھا۔ اگر کمیٹی اپنا مسودہ پیش نہیں کرتی ہے تو ہمارے پاس ایسے قوانین کے لئے تجاویز ہیں جو مقصد کو پورا کر سکتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ “اس منصوبے کے دو حصے ہیں ایک کوٹہ نظام اور دوسرا ہر برادری کی تعداد کو قانونی شکل دی جانی چاہئے اور غیر ملکیوں کی تعداد کا 25 فیصد سے زیادہ نہیں ہونی چاہئے۔

الصالح نے آبادیاتی آبادی میں واضح عدم توازن کو دور کرنے کے لئے ٹھوس کوششوں پر زور دیا اور کہا کہ ہم 3 ماہ کے اندر تارکین وطن کی تعداد کو کم کرسکتے ہیں اور ہمیں ان لوگوں کی تجدید نہیں کرنی چاہئے جن کا معاہدہ حکومت میں ختم ہوجائے اور نہ ہی ان کی رہائش کو نجی شعبے میں منتقل کریں۔
حوالہ: عرب ٹائمز

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ