کویت

نجی شعبوں کے ملازمیں کی تنخواہوں میں 50 فیصدی کٹوتی کا بل پیش

کویت سٹی 04 جون: روزنامہ عرب ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق حکومت نے نجی شعبے کے لیبر قانون میں  ترمیم کرنے کے لئے قومی اسمبلی کو ایک بل پیش کیا ہے جس کے ذریعے آجروں کو اپنے ملازمین کی تنخواہوں میں کمی کی اجازت دی جاسکتی ہے یا انہیں COVID کے دوران کم اجرت کے ساتھ خصوصی تعطیلات دی جاسکتی ہیں تاہم اس وقتی قانون کے کویتی شہریوں پر بھی منفی اثرات مرتب ہونگے کیونکہ چند قانونی چیلنجز اس حکومتی بل سے کویتی شہریوں کو محفوظ نہیں رکھ سکتے۔

روزنامہ کے ذرائع نے وضاحت کی کہ حکومت نے قومی اسمبلی کے ساتھ تعاون کرنے کا وعدہ کیا ہے تاکہ کسی ایسے فارمولے پر اتفاق کیا جا سکے جہاں اس قانون کی منظوری کے وقت درخواست نامنظور نہ ہو۔حکومت کا خیال ہے کہ اس نے کویت کے نجی شعبے میں کویتی شہریوں کو مناسب تحفظ مہیا کیا ہے جیسے روزگار کے امدادی الاؤنس کو دوگنا کرنا وغیرہ۔اس بل کو واپس لینے کے بارے میں کوئی پرجوش نہیں ہے اور تمام وزراء  پارلیمنٹ کی کمیٹیوں کے اجلاسوں میں شرکت کے لئے تیار ہیں جس پر دونوں حکام کے ذریعہ اتفاق رائے پیدا ہونے کے فارمولے پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

ذرائع نے متنبہ کیا ہے کہ قانون کو اپنانے میں کسی قسم کی ہچکچاہٹ یا تاخیر سے نجی سیکٹر کی بہت سی کمپنیاں عارضی طور پر  کام معطل کردیں گی اور اس طرح کویت سمیت تمام ملازمین کی تنخواہیں روک دی جائیں گی جن کے لئے حکومت اس وبائی مرض کے خاتمے تک کم سے کم تنخواہوں کی ضمانت دینا چاہتی ہے۔

ذرائع نے مزید انکشاف کیا کہ نجی شعبے میں کویتی مردوں کی اوسطا تنخواہ تقریبا  1،429دینار ہے اور  کویتی خواتین کی تقریبا 879 دینار ہے۔ دوسری طرف نجی شعبے میں ایک غیر ملکی کی اوسط تنخواہ 285 دینار ہے  اور خواتین کی تنخواہ 387 دینار ہے۔

رکن پارلیمنٹ احمد الفضل نے کہا کہ بل میں مذکور “غیر معمولی حالات” کے فقرے میں متعدد حالات شامل ہوسکتے ہیں جن کا آجر تنخواہوں میں کمی کو جواز پیش کرکے  استعمال کرسکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بل میں کسی کاروبار یا کمپنی کو یہ ثابت کرنے کی شرائط نہیں رکھی گئیں کہ اس کو ہرجانے کا سامنا کرنا پڑا ہے یا نہیں اس طرح سے کوئی بھی کمپنی جو بحران کے دوران زبردست فائدہ حاصل کررہی ہیں دعویٰ کرسکتی ہے کہ انہیں نقصان اٹھانا پڑا ہے جو اس وقتی قانون کی خلاف ورزی ہوگی اور حکومت کو جوابدہ ہونا پڑے گا۔ مزید برآں رکن پارلیمنٹ خلیل ابول نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ایسے فیصلے نہ کرے جو شہریوں کو تحفظ فراہم نہیں کرتے ہیں۔ خلیل ابول نے زور دے کر کہا کہ پارلیمنٹ کسی ایسے قانون کو مسترد کردے جو کویت کے تحفظ کو یقینی نہیں بنا سکتا اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ غیر واضح فیصلوں اور ان بلوں سے اجتناب کرے جو غیر واضح ہیں  اور مستقبل میں نقصان  کا باعث بن سکتے ہیں۔ 

حوالہ: عرب ٹائمز

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

Open

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ