کویت

اقامہ نہ لگوانے پر 20 دینار یومیہ جرمانہ عائد

کویت سٹی 03 جون: روزنامہ عرب ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق گذشتہ کچھ ہفتوں میں تارکین وطن کی رہائش گاہ کے قانون کا ایک بنیادی جائزہ لیا گیا ہے جس میں اس کے بیشتر مضامین کا احاطہ کیا گیا ہے جس کا مقصد ویزا تجارت کے رجحان کو ختم کرنا اور اس باب کو مستقل طور پر بند کرنا ہے۔

روزنامہ کے باخبر ذرائع کے مطابق متعلقہ رپورٹ پہلے غور و خوض اور منظوری کے لئے کابینہ کے سامنے پیش کی جائے گی اور پھر قومی اسمبلی کو ہنگامی صورتحال کے طور پر بھیجی جائے گی۔  اس مقصد کے لئے نائب وزیر اعظم اور وزیر داخلہ انس الصالح نے  فتوی اور قانون سازی کے محکمے، وزارت داخلہ کے محکمہ کے قانونی امور ، سول سروس کمیشن، کویت یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے کویتی قانون دانوں اور صحت سے تعلق رکھنے والے نمائندوں کے ساتھ ایک ٹیم بھی تشکیل دی ہے۔اس ٹیم نے پہلے ہی نئے قانون کا حتمی جائزہ لے لیا ہے جو کویت میں غیر ملکیوں کی رہائش گاہ کے قوانین کی اصلاح کرتا ہے۔

ذرائع نے واضح کیا کہ ان ترامیم میں معمولی کارکنوں یا ان کی فائل کے تحت اندراج شدہ قانون کی خلاف ورزی کرنے والوں کی گرفتاری کی صورت میں نجی شعبے میں آجروں کے خلاف جرمانے میں اضافہ بھی شامل ہے۔قانون کی خلاف ورزی کرنے والے آجروں کی کمپنیوں کو دو سال کی مدت کے لئے بلیک لسٹ کیا جائیگا یا انکی کمپنی فائل دو سال کے لئے بند کردی جائینگے نیز انکے خلاف قانونی کاروائی بھی کی  جائے گی۔ اس کے علاوہ نیا قانون کفیل  کو ان ملازمین کے لئے سفری ٹکٹ کی قیمت ادا کرنے کا پابند کرے گا جو خلاف ورزی کر رہے ہیں اور ساتھ ہی ان کے رہائش اور کھانے کی قیمت بھی کفیل کو ادا کرنی ہوگی۔ نئے قانون کے مطابق غیر قانونی رہائش پذیر افراد پر 20 دینار جرمانہ ہر روز کے حساب سے عائد ہوگا تاہم 500 دینار سے زیادہ عائد نہیں کیا جائے گا۔متعلقہ تارکین وطن پر جلاوطنی کے بعد ملک میں تین سال تک داخلے پر پابندی ہوگی۔مجوزہ قانون کی دفعات کے مطابق آجر کی  موجودگی کے علاوہ اور صحت انشورنس کے بغیر کسی بھی غیر ملکی کو رہائشی اجازت نہیں دی جائے گی نیز ڈرائیور اور “مندوب” کے پیشوں کے علاوہ ، تارکین وطن کو ڈرائیونگ لائسنس جاری نہیں کیا جائے گا بشرطیکہ تنخواہ  500 دینار سے زیادہ ہو اور اجراء  کی فیس جو 200 دینار سے زیادہ ہوسکتی ہے ادا کی جا سکتی ہو نیز لائسنس کی توثیق رہائش گاہ کی مدت سے منسلک کی جائے گی۔

ان ترامیم میں پبلک سیکیورٹی کے افسران کے ساتھ ساتھ فوجداری تحقیقات ، امیگریشن اور ریزیڈنسی امور کے محکموں کے افسران کو وسیع اختیارات دینا شامل ہے تاکہ قانون کو توڑنے کے لئے غیر ملکیوں کو ملک بدر کرنے کے انتظامی فیصلے کیے جائیں نیز ذرائع نے اشارہ کیا کہ ان ترامیم کا اعلان کیا جس میں اسپانسرشپ سسٹم کی منسوخی اور نجی شعبے کے لئے ایک مخصوص فیس پر افرادی قوت کی فراہمی کے لئے ایک سرکاری ایجنسی کے قیام پر بھی اتفاق ہے جس کا ابھی طے ہونا باقی ہے۔اسکے علاوہ تارکین وطن کے بینک اکاؤنٹس کو رہائشی اجازت نامے سے بھی لنک کئے جانے کا فیصلے پر بھی ابھی نظر ثانی باقی ہے۔

حوالہ: عرب ٹائمز

پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

Open

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ