بلاگ

کویت غیر ملکیوں کی اہمیت سے بخوبی آگاہ ہے

کویت اردو نیوز 09 فروری: روزنامہ الرای کے مطابق “ایشیاء ٹائمز” ویب سائٹ کے ذریعہ شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کورونا کا اثر دوسرے ممالک کی نسبت خلیجی ممالک کی معیشت پر زیادہ گہرا ہے جس نے ان ممالک میں تارکین وطن کارکنوں کے حالات کو منفی طور پر متاثر کیا ہے۔

اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ خطے میں تارکین وطن کے حالیہ اخراج کے باوجود خلیجی ممالک اب بھی اپنی معیشت کے لئے غیر ملکی کارکنوں کی اہمیت سے بخوبی واقف ہیں کیونکہ وہ ایک منفی بجٹ کے حصول کی کوشش کر رہے ہیں جس میں کسی بھی منفی اثرات کا تصور کیا جاتا ہے یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ تیسری سہ ماہی پچھلے سال سعودی عرب میں 257 ہزار تارکین وطن کارکنوں کی روانگی کا مشاہدہ کیا گیا تھا اسی سال کے دوران تقریبا 1.2 ملین کی رخصتی متوقع تھی۔ عمان نے گذشتہ جولائی میں 45،000 تارکین وطن کی روانگی ریکارڈ کی تھی جبکہ کویت نے 2020 کے آخری تین ماہ کے دوران تارکین وطن کی ایک بڑی تعداد کو سرکاری شعبوں کی نوکریوں سے برخاست جبکہ 83،500 تارکین وطن کو ملک سے روانگی کا ریکارڈ کیا۔

اس رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ متحدہ عرب امارات ، قطر اور بحرین میں بھی شاپنگ اسٹورز کی بندش اور ملازمتوں کی قلت کے باعث تارکین وطن کی تعداد میں کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ اس رپورٹ میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ کویت سمیت خلیجی ممالک اپنی معیشتوں میں غیر ملکی کارکنوں کی اہمیت سے بخوبی واقف ہیں۔

رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ عالمی بینک کی جانب سے سال 2018 کے اعدادوشمار کے مطابق خطے میں غیر ملکیوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے جو قطر کی کل آبادی کا 88 فیصد ، امارات میں 83 فیصد ، اور کویت میں قریب 70 فیصد تک پہنچ گیا ہے جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ اس بڑی تعداد میں غیر ملکی کارکنوں نے پورے خطے میں ایک متحرک ، ثقافتی اور معاشرتی طور پر متنوع شہری زمین کی تزئین کی تشکیل کی ہے۔

حوالہ
ٹائمز کویت
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button