بلاگ

کورونا ختم ہونے کے بعد تارکین وطن کے لیے پرکشش ممالک کون سے ہوں گے؟

کویت اردو نیوز 06 فروری: کورونا تو ختم ہوجائے گا لیکن غیر ملکی طبقہ آخر کہاں جائے گا؟

“کورونا” کے بعد کی دنیا اب پہلے کی طرح نہیں ہوگی۔ کم از کم تارکین وطن کارکنان کے لئے تو دنیا یکسر بدل گئی ہے انہیں اب اپنی منزلوں کا علم ہی نہیں ہے۔ کورونا سب کے لئے ہی باعث اذیت ہے لیکن غیر ملکی کارکنان نے اس مشکل تجربے کا سامنا کرتے ہوئے اس مرض کی دہری تلخی کا زہر چکھا ہے۔ کئی کارکنان نے رضاکارانہ طور پر وطن چھوڑ دیا جب کہ دوسروں کو مشکل انتخاب دیئے گئے جس کے بعد صرف ملک چھوڑنا ہی واحد حل تھا۔ دنیا میں بدلتے قانون اور خاص کر کویت میں قوانین کی تیزی سے تبدیلی نے کئی غیر ملکی کارکنان کے مستقبل تاریک کردیئے۔

لاکھوں مزدوروں کو اپنے گھروں کو واپس جانے پر مجبور کرنے کے بعد اس بات کا امکان نہیں ہے کہ دنیا ایک بار پھر بڑی ہجرت تحریک کا مشاہدہ کرے گی اور جو بھی کسی ملک میں قیام کے بارے میں سوچے گا وہ اپنی نئی منزل کے لئے ہزار بار فیصلہ کرنے سے پہلے سوچے گا تاکہ نئی زندگی کی نئی تلخی چکھنے سے بچ سکے لہذا کورونا کے بعد اب کوئی ملک ماضی کی طرح کارکنان کے لئے کشش کا باعث نہیں بن سکے گا خاص طور پر کویت اب غیر ملکی کارکنان کے لئے اپنی کشش کھو رہا ہے۔ ہر دن ایک نئے فیصلے اور نت نئے قوانین نے غیر ملکی کارکنان کے لئے کویت میں غیر یقینی صورتحال پیدا کردی ہے۔ کویت کا ملکی وژن اور کویتائزیشن فیصلہ اس کے بعد سرکاری اداروں سے غیر ملکی کارکنان کی برطرفی اور غیر ملکیوں کی تعداد صرف 30 فیصد کرنے کا فیصلہ جبکہ کبھی غیر ملکیوں کی بھرتیوں کی خبروں نے تارکین وطن کو الجھن میں ڈال دیا ہے۔

تاہم ملک کے حالیہ رجحانات سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ کویت کا مستقبل بطور تارکین وطن کم ہنر مند کارکنوں کے لئے کم سے کم پرکشش نہیں ہوگا۔ وائٹ کالر ملازمتیں ڈاکٹرز، ہائی اسکول کے ڈپلومہ ہولڈرز اور تکنیکی ماہرین کے ساتھ ساتھ اعلی تعلیم یافتہ افراد کے لئے لیبر مارکیٹ میں جگہ ہوگی۔

“ایکسپیٹ نیٹ ورک” کے ذریعہ شائع کردہ ایک حالیہ تحقیق میں یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ ہسپانوی شہر میڈرڈ کورونا کے بعد کے مراحل میں پوری دنیا سے بیرون ملک مقیم افراد کے لئے سب سے زیادہ پرکشش ہوگا۔ صحت کی سہولیات کے علاوہ ملازمت کے مواقع کی دستیابی، نقل و حمل کے سستے ذرائع ، سستے ریستوران جیسا کہ ریسٹورنٹ کی موجودگی کو دنیا کے بہترین مقامات میں شمار کیا جاتا ہے میڈرڈ غیر ملکی کارکنان کے لئے پرکشش مقام ہوسکتا ہے جبکہ آئس لینڈ کا شہر ریکجیوک تارکین وطن کارکنوں کے لئے دوسری بہترین منزل ہوگی کیونکہ یہ ایک متنوع آب و ہوا کا حامل اور قدرتی خوبصورت ملک ہے اس کے علاوہ معاشرتی بہبود کا نظام ، تعلیم اور مفت صحت کی دیکھ بھال اس ملک کی کشش میں اضافہ کردیتی ہے۔ تیسرا بہترین شہر لکسمبرگ ہو گا جو متنوع آبادی والے دنیا کے محفوظ ترین ملکوں میں شمار ہوتا ہے جہاں تارکین وطن آبادی کا تقریبا 44 فیصد ہیں۔

امور خارجہ کے میگزین کی شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں ظاہر ہوتا ہے کہ جاپان غیر ملکی مزدوروں اور بین الاقوامی طلباء کے لئے بھی سب سے زیادہ پرکشش ممالک میں شامل ہے۔ اس رپورٹ میں یہ واضح کیا گیا ہے کہ جاپان کی حکومت نے گذشتہ چند سالوں کے دوران ویزا کی نئی کٹیگری جاری کی ہے اور کچھ غیر ملکی کارکنوں اور طلباء کو لانے اور ان کو ملک میں رکھنے کے لئے کچھ موجودہ ویزا کے لئے آسان معیارات متعارف کرائے ہیں۔

موجودہ صورتحال میں ایسا لگتا ہے کہ اپنے آبائی ممالک میں اپنے کنبوں کے ساتھ رہنا تارکین وطن کی اوالین ترجیح ہوگی خاص طور پر وہ لوگ جنہیں کورونا بحران کے دوران امیگریشن ممالک میں سخت تجربات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

ان لوگوں میں سے بہت سے لوگ اب اپنے کام کے دوران حاصل ہونے والی بچت پر انحصار کریں گے اور ان چینلز میں انویسٹ کریں گے جو انھیں پائیدار آمدنی کا موقع فراہم کریں کیونکہ ایسے وقت میں ملازمتوں کے لئے مواقع تلاش کرنا آسان نہیں ہو گا۔

انٹرنیشنل لیبر آرگنائزیشن کے چیف روزگار ماہر گیری رین ہارٹ نے کہا کہ اس وبا کے نتیجے میں سپلائی چین اور بند بارڈرز کی رکاوٹ کے باعث مزید کمپنیاں ٹیکنالوجی ، آٹومیشن اور مصنوعی ذہانت کی طرف رجوع کریں گی جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ یہ تارکین وطن کے لئے بری خبر ہے خاص طور پر جنوب مشرقی ایشین ممالک کے لئے خاص طور پر وہ لوگ جو کپڑے کی فیکٹریوں میں کام کرتے ہیں یا تھائی لینڈ میں کیکڑے کے چھلکے اتارنے والی صنعت جو میانمار کے تارکین وطن کرتے ہیں اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ ان صنعتوں میں مزدوروں کی ضرورت کو کم کرنے یا ختم کرنے کے لئے ٹیکنالوجی پہلے ہی موجود ہے۔

رین ہارٹ نے نشاندہی کی کہ خاص طور پر ایشیائی ممالک کے تارکین وطن مزدوروں کو بڑھتے ہوئے امتیازی سلوک کا سامنا کرنا پڑا ہے کورونا بحران کے دوران کیونکہ سیاسی جماعتیں تارکین وطن مزدوروں کو سخت اور بے دخل قوانین کے پیش نظر قربانی کا بکرا بنانے کی کوشش کر رہی ہیں۔

رین ہارٹ نے نشاندہی کی کہ “ضروری نہیں کہ کورونا کے بعد کی دنیا تارکین وطن کے لئے بری خبر ہی لائے کیونکہ ایسے اشارے بھی مل رہے ہیں کہ ان کے لئے نئے مواقع اور بہتر مواقع دستیاب ہوں گے”۔

رین ہارٹ نے کہا کہ اب بہت سارے تارکین وطن ابتدائی خطوط پر طبی کردار ادا کررہے ہیں یا بنیادی خدمات مہیا کررہے ہیں جیسے سپر مارکیٹ میں کام کرنا یا اسپتالوں کی صفائی کرنا وغیرہ۔

انہوں نے بحران سے نمٹنے کے لئے اعلی آمدنی والے ممالک میں تربیت یافتہ اور بیرون ملک پیدا ہونے والے صحت کے کارکنوں پر عائد پابندیوں میں نرمی کی طرف بھی اشارہ کیا جیسے غیر ملکی ڈاکٹروں کو جرمنی میں تسلیم شدہ قابلیت کے بغیر بھی بلایا گیا اور ان کی قابلیت کو جلد ہی تسلیم کرلیا گیا۔

حوالہ
الرای
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button