بلاگ

بیگم سفیر پاکستان، کویت مسز عنبرین مصطفٰی سے بطور صدر انٹرنیشنل ویمن گروپ خصوصی انٹرویو

خواتین ڈپلومیسی میں انٹرنیشنل ویمن گروپ IWG کی نئی صدر محترمہ عنبرین مصطفٰی کا خصوصی انٹرویو

تحریر جاری ہے‎

کویت اردو نیوز 30 نومبر: کویت میں بین الاقوامی خواتین کے گروپ کی نئی صدر محترمہ عنبرین مصطفیٰ ایک پُرجوش اور پر وقار شخصیت ہیں۔ سفارتی حلقوں میں ان کا وسیع تجربہ آئی ڈبلیو جی کے لئے ایک اثاثہ ہے جو بین الاقوامی خواتین اور مقامی لوگوں کے متنوع گروپ کے درمیان باہمی رابطے اور دوستی کو فروغ دینے میں سب سے آگے رہا ہے۔ روزنامہ ٹائمز کویت کے منیجنگ ایڈیٹر کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں مسز عنبرین مصطفیٰ سفارتی اور معاشرتی زندگی کے ساتھ ساتھ کویت میں اپنے تجربات کے بارے میں بھی اپنا نظریہ بیان کرتی ہیں۔

سوال: براہ کرم ہمیں اپنے اور اپنے کنبے کے بارے میں تھوڑا بہت بتائیں؟

جواب: میرا نام عنبرین مصطفیٰ ہے اور میں کویت میں پاکستان کے سفیر کی اہلیہ ہوں۔ میں انٹرنیشنل ویمن گروپ (IWG) 2020-2021 کی صدر ہوں۔ میں نے اپنی تعلیم اور کالج راولپنڈی سے حاصل کی تھی اور اس کے بعد دفاع اور اسٹریٹجک میں قائداعظم یونیورسٹی اسلام آباد سے ماسٹر ڈگری حاصل کی۔ پھر میں نے شادی کی اور سفارتی زندگی میں اپنا سفر شروع کیا۔ میں دو خوبصورت بچوں ، ایک بیٹی اور بیٹے کی ماں ہوں۔ میں نے مختلف ممالک میں بطور ماہر تعلیم کام کیا ہے جہاں ہمیں تعینات کیا گیا ہے۔ مجھے سفر کرنا پسند ہے اور میں خاص طور پر تاریخ اور نئی ثقافتوں کی تلاش میں دلچسپی رکھتی ہوں۔ مجھے اپنے فارغ وقت میں کتابیں پڑھنے اور بورڈ گیمز کھیلنے کا شوق ہے۔ مجھے کھانا پکانے اور فلمیں دیکھنا اچھا لگتا ہے۔

سوال: سفیر پاکستان کی شریک حیات کی حیثیت سے سفارت کاری کو فروغ دینے کے لئے آپ کیا کردار ادا کرتی ہیں؟

جواب: سفیر کی اہلیہ بننا ایک بہت بڑا کام ہے ، گھریلو محاذ پر یہ یقینی بنانا ہوتا ہے کہ رہائش گاہ میں ہونے والی تقریبات میں ثقافت کو مناسب طریقے سے پیش کیا جائے، اس میں تہذیبی نمائش ، پرجوش مہمان نوازی کا صحیح نمونہ ہونا چاہئے۔

اگرچہ سفیر کا کام بڑے پیمانے پر قوم کے مفادات کو پیش کرنا اور اس کا تحفظ کرنا ہے تاہم شریک حیات کو ثقافتی تنوع کے عہدوں پر پل بنانا ہوگا اور اس عمل میں وہ اپنے ثقافتی اصولوں کی اصل صنف کو ظاہر کرتی ہے۔

سوال: کیا آپ سفارتی حلقوں میں اپنے گذشتہ عہدے اور سرگرمیاں بتاسکتی ہیں؟

جواب: میری سفارتی زندگی تقریبا 26 سالوں پر محیط ہے۔ ہمیں تنزانیہ ، کرغزستان ، یونان ، جنوبی کوریا ، انڈونیشیا ، شمالی کوریا اور اب کویت میں پوسٹ کیا گیا ہے۔ میں اپنے ملک کے بھر پور اور رنگین ثقافتی ورثے کو فروغ دینے کے لئے ثقافتی پروگراموں کا اہتمام کرکے ہمیشہ سفارتی سرگرمیوں میں سرگرم رہی ہوں۔ میں اپنی آخری پوسٹنگ میں ویمن ایسوسی ایشن کی صدر رہی ہوں۔ میں آپ کی کمیونٹی میں ایک کی مکمل صلاحیت میں شراکت کرنے پر پختہ یقین رکھتی ہوں۔

سوال: کویت میں آمد کے بعد آپ تیزی سے ایڈجسٹ ہوئی اور انٹرنیشنل ویمن گروپ کے صدر کے عہدے کے لئے منتخب ہوئی ہیں، کیا آپ اس کی تفصیل بیان کرسکتی ہیں؟

جواب: چونکہ یہ میرا 7 واں بین الاقوامی سفر ہے لہذا اس کو ایڈجسٹ کرنے اور زندگی کا آغاز کرنے میں زیادہ دیر نہیں لگائی اور مجھے یہ کہنا ہوگا کہ کویت ایک بہت ہی راحت بخش ملک ہے اور کویت کے لوگوں کی گرم جوشی اور مہمان نوازی اس اقدام کو زیادہ آسان بناتی ہے۔ اس کے علاوہ ہمارے پاس ایک دوستانہ اور فعال پاکستانی کمیونٹی ہے جس نے اس منتقلی میں ہماری مدد کی۔

انٹرنیشنل خواتین گروپ (آئی ڈبلیو جی) ایک طاقتور گروپ ہے اور یہ بین الاقوامی اور کویتی خواتین کے مابین جو کردار ادا کررہا ہے وہ نمایاں ہے۔ وہ ایک کنبہ کی طرح آپ کا خیرمقدم کرتی ہیں۔ میں آئی ڈبلیو جی بورڈ کی شکرگزار ہوں جنہوں نے مجھے اس باوقار تنظیم کا صدر بننے کا موقع فراہم کیا۔ میں اس اعتماد کا احترام کرتی ہوں جس نے مجھ پر اعتماد کیا۔

سوال: آپ اپنے دور حکومت میں آئی ڈبلیو جی کے لئے کیا کردار ادا کرنے کا تصور کرتی ہیں؟

جواب: آئی ڈبلیو جی اپنے مینڈیٹ میں بالکل واضح ہے اور اسی طرح تمام IWG صدور IWG کے اخلاق، دوستی اور بھائی چارے کے بنیادی اقدار کو مختلف ثقافتوں اور قومیتوں کی خواتین میں برقرار رکھنے کے پابند ہیں۔

مجھے فخر ہے کہ خواتین کو ملنے ، دوستی کرنے اور ایک دوسرے کی ثقافت اور کویت کے بارے میں جاننے کے لئے ایک فورم فراہم کرنے کے اپنے مقصد کو پورا کرتے ہوئے میں اپنے بہت ہی قابل پیش رو پیشہ ور افراد کے نقش قدم پر چلنے کے قابل ہوں۔ میں چاہوں گی کہ اس گروہ کی نشوونما ہو اور بین الاقوامی اور کویتی خواتین کے زیادہ ممبر ہوں۔

سوال: کوویڈ 19 نے سنجیدگی سے آپ کے ممبروں کے باہمی رابطے کو محدود کردیا ہے۔ آپ اس پر قابو پانے کا کیا ارادہ رکھتی ہیں

جواب: بے شک وبائی مرض کے ساتھ موجودہ صورتحال نے اپنا ایک خاص چیلنج تشکیل دیا ہے جس کا سامنا آئی ڈبلیو جی نے پہلے نہیں کیا تھا لہذا اس لحاظ سے شاید میرے دور میں اس بات کی نشاندہی ہوگی کہ ہم ان چیلنجوں کا نظم کس طرح کرتے ہیں۔ ہم موجودہ صورتحال سے متعلق حکومت کی پالیسیوں کی سختی سے پابندی کرتے ہیں۔ ہماری بیشتر سرگرمیاں اور پروگرام اب آن لائن ہیں اور ہم اپنے قابل احترام ممبروں کے لئے دلچسپ سرگرمیاں پیدا کرنے کے لئے اپنی پوری کوشش کر رہے ہیں۔

سوال: کویت میں اب تک اپنے تجربے کے بارے میں ہمیں بتائیں۔

جواب: کویت ایک خوبصورت ملک ہے اور یہاں کے لوگوں کی گرمجوشی سے آرام اور سکون ملتا ہے۔ یہاں کا ماحول کافی گھل مل جانے والا ہے جبکہ ثقافتی لحاظ سے بھی کافی حد تک اسے اپنے ملک جیسا ہی پایا ہے۔ یہ ملک کھلی بانہوں کے ساتھ آپ کا خیرمقدم کرتا ہے اور آپ اس جگہ کو بطور گھر محسوس کرنا شروع کردیتے ہیں۔ میں یہاں ایک سال رہ رہی ہوں، وبائی امراض کے ساتھ رواں سال نے ہماری زندگی کو محدود کردیا ہے لیکن کویت کی مہمان نوازی اور گرم جوشی میں کوئی روک تھام اور حدود نہیں تھے۔

سوال: سفارت کار کی شریک حیات ہونے کے ناطے آپ کو کن چیلینجز کا سامنا کرنا پڑتا ہے؟

جواب: چیلنجز ہر جگہ ہیں! سفارتی شریک حیات ہونے کی حیثیت سے ہر تین سال بعد چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے خاص طور پر اسکول جانے والے بچوں کے ساتھ ، بیگ بھرنا اور نئی زندگی کا آغاز کرنا آسان نہیں ہے۔ جو چیز مجھے سب سے مشکل ہے وہ ہے لوگوں کو الوداع کرنا۔ آپ اپنی زندگی ان لوگوں کے گرد گزارتے ہیں جن کا آپ روزانہ کی بنیاد پر سامنا کرتے ہیں وہ آپ کے دوست نہیں ہوتے بلکہ وہ آپ کی زندگی کا لازمی جزو بن گئے ہوتے ہیں جیسے آپ کی گلی کا سیکیورٹی گارڈ یا خاتون جو آپ کے گھر کے قریب سبزیاں فروخت کرتی ہے۔ اور پھر ایک صبح آپ اپنی تین سال کی مدت کو مکمل کر کے سب کو اور ہر چیز کو الوداع کہہ دیتے ہیں۔ یہ میرے لئے سب سے مشکل کام ہے۔

سوال: بطور سفارتکار آپ اپنی زندگی میں سب سے زیادہ کیا لطف اٹھاتی ہیں؟

جواب: سچ میں، میں نے ایک سفارت کار کی زندگی کو ہر چیز سے لطف اندوز کیا ہے۔ مختلف ثقافتوں میں رہنے نئی زبانوں اور کھانوں کے تجربے کے لئے خود کو میں خوش قسمت سمجھتی ہوں۔ میرے پاس دنیا بھر سے دوست ہیں۔ اس سفارتی زندگی کا سب سے لطف اندوز حصہ ایک نئی ثقافت کو جاننا ہے۔ یہ دلچسپ ہے اور بہت تجربہ دینے والا بھی ہے۔ پہلے پہل اس کو جاننے کا تجسس ہوتا ہے پھر وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ آپ اس کا ایک حصہ بن جاتے ہیں!

سوال: معاشرے میں کویت کی خواتین کے کردار کو آپ کیسے دیکھتی ہیں؟

جواب: میں واقعتا کویت کی خواتین سے متاثر ہوں۔ وہ تعلیم یافتہ ، مضبوط اور نامور مقامات پر کام کر رہی ہیں۔ انہوں نے جدوجہد کی ہے اور محنت اور عزم کے ساتھ معاشرے میں جگہ بنائی ہے۔ اب آپ انہیں زندگی کے ہر شعبے میں کام کرتے ہوئے دیکھتے ہیں۔ وہ قومی اسمبلی میں ، ججوں اور وکیلوں کی حیثیت سے عدالتوں میں ، وہ آرٹسٹ اور ادیب ، ڈاکٹر اور تیل کے شعبے میں بھی ہیں۔ میں واقعتا حیرت زدہ تھی کہ اتنی بڑی تعداد میں خواتین تیل کی صنعت میں کام کررہی ہیں جو عام طور پر مردانہ فیلڈ کے طور پر سمجھا جاتا ہے۔

حوالہ
ٹائمز کویت
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ