بلاگ

کویت: تارکین وطن کو عزت سے “الوداع” کریں

کویت اردو نیوز 27 اکتوبر: تارکین وطن کو احترام سے الوداع کریں۔

انسانی اسمگلروں کے گروہوں نے تمام قومیتوں کے غیر ملکی مزدوروں کی شبیہہ کو مسخ کردیا ہے کیونکہ یہ انسانی اسمگلر مزدوروں کو ملک میں لاتے ہیں اور انہیں کام دینے کے بجائے سڑکوں پر چھوڑ دیتے ہیں۔ یہ لالچی لوگ غیر ملکیوں کا استحصال کرتے ہیں جس کے نتیجے میں یہ تارکین وطن کسی بھی ایسی نوکری کی تلاش میں لگ جاتے ہیں جو ان کی پیاس اور بھوک کو پورا کرے۔ بے یارومددگار غیرملکیوں کے دکھوں میں اضافہ اسوقت اور بڑھ جاتا ہے جب کفیل رہائش کے اجازت نامے کی تجدید کے لئے بھاری رقم کی درخواست کرتا ہے۔

روزنامہ الجریدہ کے کالم نگار علی البداح لکھتے ہیں کہ “مصری کارکنوں کے خلاف من گھڑت ہنگامہ ایک بار پھر ہمیں پریشان کر دیتا ہے اور میں اس ہنگامے کی وجوہات یا اس کے عزائم اور کویت اور مصر کے مابین پھیلاؤ کی کوشش کے بارے میں دوبارہ بات نہیں کرنا چاہتا کیونکہ وزارت خارجہ اپنا کردار ادا کرچکا ہے تاہم میں تیل سے پہلے دور کے کویت یا ’ابتدائی کویت‘ پر ​​روشنی ڈالنا چاہتا ہوں۔

ڈاکٹر عادل عبد المغنی نے جو اعدادوشمار شائع کیے ہیں ان کا کہنا ہے کہ 1957 میں کویتی شہریوں کی تعداد 206،000 کی کل آبادی میں لگ بھگ 114،000 تھی اور تیل کی پہلی کھیپ برآمد کرنے کے 11 سال بعد کویتی شہریوں نے 55 فیصد آبادی کی نمائندگی کی۔ اس وقت کویتی تمام پیشوں میں کام کرتے تھے۔ تیل سے پہلے کویتی ملاح، بڑھئی، معمار، لوہار، بیکر، کھودنے والا، صفائی کرنے والا، واٹر ٹرانسپورٹر اور سبزیوں، گوشت اور مچھلیوں بیچنے والا بھی تھا اور کویتی باشندوں کے ذریعہ تمام پیشوں اور ملازمتوں کو انجام دیا جاتا تھا اور جب کویت نے تیل سے پیسہ کمانا شروع کیا تو دولت کی تقسیم نے کویت کے طرز زندگی کو تبدیل کرنا شروع کر دیا اور اپنے پیشوں کو جاری رکھنے کے بجائے عرب اور غیر ملکی کارکنوں کو سخت اور محنت والے کام انجام دینے کے لئے اپنے ملک بلوایا گیا اور ان پر انحصار کرنے لگے یہاں تک کے کویتی باشندے اپنے اصل پیشے بھول گئے۔

اس کے نتیجے میں محنت کش طبقے کی نسل غائب ہوگئی اور ان کی جگہ غیر فعال نسل نے لے لی جو کویت کی بدقسمتی تھی۔ مستقبل کے بارے میں کوئی نتیجہ خیز گروہ نہیں تھا سوائے ایک محدود تعداد میں کاروباری تاجروں کے جو مستقبل کا پیش خیمہ رکھتے تھے لہذا انہوں نے انڈسٹری اور میگا پروجیکٹس قائم کیے جو آج تک تیل کے بعد کویت کی زندگی کا روشن پہلو بنے ہوئے ہیں۔ کویت کے تاجروں کے اس گروہ کی روانگی سے کویت کے مستقبل کے خواہاں بلڈروں اور اختراع کاروں کی نسل ختم ہوگئی۔

کویت غیر ملکیوں سے خوش تھا جو کویت میں ہر طرح کا کام انجام دیتے تھے ہر وہ کام جو کبھی کویتی باشندے خود کرتے تھے اور اس کے نتیجے میں یہ ملک غیرملکی افرادی قوت پر مکمل طور پر انحصار کرنے لگا یہاں تک کہ تیل کی صنعتوں میں بھی کویتی شہری نظر نہ آتے تھے تیل کی صنعت بھی غیر ملکیوں کے ہاتھ میں ہوتی تھی اور کویتی باشندے صرف سفید کالر نوکریوں پر ہی فوکس کرتے تھے خاص کر ریاستی وزارتوں میں جہاں تقریبا تمام ملازمتوں میں تنخواہ بہت ذیادہ دی جاتی تھی جبکہ کام بہت کم لیا جاتا تھا۔

غیر ملکی مزدوروں میں اضافے کے ساتھ کویت نے محسوس کرنا شروع کیا کہ ان کی تعداد بہت کم ہوگئی ہے لہذا ہم نے ایک سے زیادہ بار کچھ قومیتوں کے تناسب کے معاملے پر بحث کی جن کا ہمیں خوف تھا اور اس ہنگامے میں سب سے پہلے ایرانی کارکنان پھر فلسطینی پھر بیدون، بنگلہ دیشی اور آخر کار مصری مزدور آیا۔

بدقسمتی سے مصری افرادی قوت کی تعداد پر بہت سے لوگ فریاد کرتے ہیں حالانکہ کسی مصری کو کویت میں کفالت کرنے والے کسی فرد،کمپنی یا سرکاری ایجنسی کے بغیر کام کرنے کی اجازت نہیں ہے اور قانونی قواعد و ضوابط کے مطابق ہی کام کرسکتے ہیں لیکن کسی نے یہ نہیں سوچا کہ اگر مصری کارکن اب ملک چھوڑ کر چلے گئے تو کیا ہوگا؟

مزید پڑھیں: الیکشن کی انتخابی مہم کے دوران جزوی کرفیو لگ سکتا ہے

کویت میں اب بہت ساری کمیونٹیز ہیں جن میں سے کچھ کو اپنی حکومتوں کی توجہ حاصل ہے جیسا کہ فلپائن کے صدر اور مصر کی حکومت نے کیا تھا اور ان میں سے کچھ لوگوں نے کوئی ہنگامہ نہیں کیا لیکن کویت اس طرف توجہ نہیں دیتا۔

یقینا ہر ملک کی ملازمتوں میں ایک توازن موجود ہے۔ تمام ممالک مقامی آبادی کی فیصد کا تعین کرتے ہیں اور آبادیاتی نظام کا جائزہ لیتے ہیں لیکن یہ محتاط منصوبہ بندی کے ساتھ اور کسی انسان کو نقصان پہنچائے بغیر کیا جاتا ہے لہذا ہمارا فرض ہے کہ ہم اپنے اعزاز کا احترام کریں۔ مہمانوں کو مناسب انداز میں الوداع کریں اور ان کے واجبات ادا کریں۔ جب ہم معمولی پیشوں مثلاً لوہار ، بڑھئی ، اور اپنی روزمرہ کی زندگی میں تمام آسان تکنیکی پیشوں میں مہارت حاصل کرلیں تب ہی ہم کہہ سکتے ہیں کہ “آپ کا شکریہ غیر ملکیوں۔”

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ