بلاگ

فرانسیسی مصنوعات کا بائیکاٹ مسلے کا حل نہیں

کویت اردو نیوز 26 اکتوبر: فرانسیسی مصنوعات کا بائیکاٹ مسئلے کا حل نہیں ہے۔

تفصیلات کے مطابق کویتی معاشرے میں پیغمبر اسلامؐ کے خلاف ہونے والے جرائم کے فوری رد عمل کے طور پر فرانسیسی سامان اور اشیاء کا بائیکاٹ بہت سے فرقوں کا سب سے مقبول مطالبہ ہے البتہ روزنامہ القبس کی خبروں کے مطابق یہ بائیکاٹ جس کا بہت سے لوگوں نے وقتا فوقتا مطالبہ کیا ہے پچھلے مختلف مواقعوں میں غیر موثر ثابت ہوا ہے۔

مبصرین کے مطابق اس طرح کے بائیکاٹ کامیاب انتقامی کارروائی کی نمائندگی نہیں کرتے ہیں۔ یہ ہمیشہ ناراض جذباتی ردعمل ہوتا ہے جس کا اثر محدود ہوتا ہے۔ اگر اس سے دوسری فریق کو نقصان ہوتا ہے تو اسی وقت یہ مقامی عوام کو بھی نقصان پہنچا رہا ہوتا ہے وہ کئی ضروری اشیاء سے محروم رہتے ہیں۔

دونوں ممالک کے مابین تجارتی تبادلے کا حجم اگرچہ چھوٹا نہیں ہے (اس سال کی پہلی ششماہی میں اس کی مقدار 362.7 ملین یورو ہے) لہذا حقوق کے حصول کے لئے مہذب مکالمہ سب سے قابل اعتماد اور موثر ہتھیار ہے۔

ان کا خیال ہے کہ حقوق انسانی کی بحالی کا سب سے موثر طریقہ سول سوسائٹی کی تنظیموں کی جانب سے قانونی کارروائی کرنا ہے۔ چونکہ بائیکاٹ جس کی بہت سے لوگوں کی طرف سے وکالت کی جارہی ہے یہ ایک علامتی صورتحال ہے لہذا جو پیغام بھیجا جارہا ہے وہ متعلقہ جماعت تک نہیں پہنچ سکتا ہے۔

مزید پڑھیں: فرانس نے خلیجی ممالک سے اپنی مصنوعات کا بائیکاٹ روکنے کی درخواست کر دی

بہت سے افراد نے اشارہ کیا ہے کہ اشیائے خوردونوش کا بائیکاٹ کرنا صرف ایک ناراض ردعمل ہے جو بہت سے سامان کی موجودگی کی وجہ سے بہت جلد اپنا اثر کھو دیتا ہے۔ مثال کے طور پر فرانسیسی دوائیاں جس کی مریضوں کو فوری طور پر ضرورت ہے اور وہ عادی ہیں آخر کار اس کو خریدنے پر مجبور ہونگے لہذا یہ بائیکاٹ وقتی عمل ہے اور اتنے سنگین مسئلے کا حل نہیں ہوسکتا ہے۔

حوالہ
عرب ٹائمز
پوری خبر پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں شکریہ

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

آپ اس خبر کو کاپی نہیں کرسکتے ہیں

ایڈ بلاک پتہ چلا

برائے مہربانی ایڈ بلاک کو بند کریں شکریہ